Jump to content
Private Cloud Activation Last Date 01-10-2020 After Last Date Not include Previous Purchase in your Private Cloud ×
URDU FUN CLUB
Private Cloud Activation Last Date 01-10-2020 After Last Date Not include Previous Purchase in your Private Cloud

SwngerLady

Active Members
  • Content Count

    4
  • Joined

  • Last visited

Community Reputation

1

4 Followers

About SwngerLady

  • Rank
    SwingerLady

Profile Information

  • Gender
    Female

Recent Profile Visitors

111 profile views
  1. میرا ارادہ ہے اَپنی کہانی سب سے شیر کرنے کا
  2. اَپ بھول رہے ہیں کہ ان ۵۷ فیصد میں میں (ایک عورت) بھی شامل ہوں
  3. ساری ۹1 مرد نہیں بلکہ ۱9 مردوں سے سیکس کیا ہوا ہے میں نے اب تک
  4. میں خود ایک سونگر لیڈی ہوں۔ مجھے اس کام پہ میرے شوہر نے مجھے لگایا تھا اور اب مجھے اس میں ان سے زیادہ مزہ آتا ہے۔میں اپنے شوہر کی تیسری بیوی ہوں اور انھوں نے اپنی پچھلی دونوں بیویوں کے ساتھ سونگنگ کی ہوی ہے۔ ہم دونوں تقریباً پچھلے تین سال سے سونگنگ کر رہے ہیں۔ اس دوران میں تقریباً ۹۱ مردوں سے سیکس کر چکی ہوں۔ تو جو کچھ بھی میں کہوں گی وہ تجربے کے بنا ہ پر کہوں گی۔ سونگنگ ایک ایسا ٹاپک ہے کہ جس ہمارے معاشرے میں کوی بات نہیں کرنا چاہتا کیونکہ یہ انکی سوچ سے باہر ہے کہ ہمارے اسلامی اور قدامت پسند معاشرے میں ایساممکن ہے۔ لیکن وہ یہ بات بھول جاتے ہیں کہ ہم لوگ انسان پہلے او رمسلمان بعد میں ہیں۔ اور ہر انسان کی طرح ہماری بھی جنسی ضروریات ہیں جسکی مکمل تسکین میں ہمارا معاشرہ او رمذہب رکاوٹ ہیں جس سے ہماری قوم جنسی گھٹن کا شکار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان دنیا میں پورن سرچزمیں نمبر ون ہے۔اور اس کی جھلک آپ اس تھریڈ کے رسپونسز سے دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح وہ کہ رہے ہیں کہ یہ سب ہمارے معاشرے کے اقدار کے خلاف ہے۔ تو میرا ان سے یہ سوال ہے کہ کیا جو کچھ وہ یہاں کرنے آتے ہیں وہ ہماری معاشرتی اقدار کے خلاف نہیں۔شادی شدہ عورتوں کے معاشقے کی داستانیں، خونی رشتوں کے درمیان جنسی تعلقات، غیر ازدواجی جنسی تعلقات ، یہ سب کیاہمارا دین اورمعاشرہ اس سب کی اجازت دیتا ہے تو پھر آپکو سونگنگ پہ اتنا اعتراض کیوں۔ یہ تو سب ہی جانتے ہیں مرد کی کبھی بھی ایک ہی عورت سے تسکین نہیں ہوتی۔ لیکن کچھ لوگ یہ بھول جاتے ہیں کہ عورت بھی اس معاملے میں مرد سے پیچھے نہیں ہوتی جس طرح مرد ایک ہی عورت کو چودتے چودتے بور ہو جاتا ہے اسی طرح عورت بھی ایک ہی مرد سے چدوا چدوا کر بور ہو جاتی ہے بس شوہر کی محبت اورمعاشرے کے دباو کی وجہ سے وہ اس کا کھل کر اظہار نہیں کر پاتی۔ اسی لیے دونوں مرد اور عورت غیر ازدواجی تعلق قام کرتے ہیں اپنی روٹین سیکس سے ہٹنے کے لیے۔بہتر یہ نہیں ہے کہ دونوں میاں بیوی ایک دورے کو دھوکہ دینے کی بجاے اپنی اس بنیادی جنسی ضرورت کو تسلیم کریں اور باہمی رضامندی سے ایک دورے کو اجازت دیں غیر ازدواجی تعلق رکھنے کی۔ میرے خیال میں اس میں کوی مزاقہ نہیں ہے
×
×
  • Create New...