Jump to content
URDU FUN CLUB

Dholki

Active Members
  • Content Count

    10
  • Joined

  • Last visited

Community Reputation

7

1 Follower

Profile Information

  • Gender
    Male

Recent Profile Visitors

The recent visitors block is disabled and is not being shown to other users.

  1. ھیلو دوستو ایک اور سٹوری لایا ھوں آپ کے لئے مزیں کریں #ڈکیٹ صفحہ1 پہلی_بار_ایک_منفرد اور بولڈ ناول ایک واردات محبت کی واردات بن گئ Nawaab_Zada_Shahid_writer میرا_نام_مناہل_چوہدری ھے میری شکل و صورت پاکستانی سنگر فادیہ شبروز جیسی ھے میں سمارٹ جسم کی مالک ھوں اور میرا فگر بتیس ھے میں جوانی میں کسی تیسری آنکھ کا شکار نہیں ھوئی تھی مگر آپ کو معلوم ھوگا وقت سب کچھ بدل بھی دیتاھے.. میں نے اپنے آپ کو بہت فٹ رکھا ھوا تھا کیونکہ شرو ع سے ھی میری توجہ فٹنس پر مرکوز رہی تھی میری فٹنس کا راز رات کو بہت کم کھاتی تھی اور واک لازمی کیا کرتی سونے سے پہلے اکثر شباب کے قدر دان مجھ پر لائن مارتے تھے میرا نام بھی مناہل تھاکسی ایرے غیرے نتھو خیرے کو بھلا کب گھاس ڈالتی میں ﻣﯿﮟ ﺍﮐﺜﺮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻨﺴﺘﮯ ﺑﺴﺘﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﮭﺎﮒ ﺟﺎﺋﮯ، ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺳﮯ ﻧﺎﻃﮧ ﺗﻮﮌ ﻟﮯ، ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻮﺷﺤﺎﻝ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ۔ ﻧﻮ ﻋﻤﺮ ﺍﻭﺭ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﺁﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﭼﻠﻮ ﮐﻢ ﻋﻘﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﺳﻤﺠﮭﯽ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﮬﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺷﺎﺩﯼ ﺷُﺪﮦ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺟﻮ ﺗﯿﻦ ﭼﺎﺭ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﯾﮧ ﭘﮍﮪ ﮐﮯ ﯾﺎ ﺳُﻦ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﺷﻨﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻓﺮﺍﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﺑﮩﺖ ﻋﺠﯿﺐ ﻟﮕﺘﺎ۔ ﺑﻌﺾ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﺗﻮ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﻨﮕﯿﻦ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﺟﺐ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯽ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﺮﺩ ﺳﮯ ﻣﻞ ﮐﺮ ﻗﺘﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﮐﺮﻭﺍ ﺩﯾﺘﯽ۔ ﺍﯾﺴﯽ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﺟﯿﺴﯽ ﻣﻠﺘﯽ ﺟُﻠﺘﯽ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﺁﺋﮯ ﺩﻥ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺧﺒﺎﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺯﯾﻨﺖ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺍﻥ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﻟﻌﻦ ﻃﻌﻦ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺑُﺮﮮ ﺑُﺮﮮ ﺍﻟﻘﺎﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺗﯽ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﻗﺎﺑﻞِ ﻧﻔﺮﺕ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ 22 ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 3 ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﻮ ﭼُﮑﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮈﯾﮍﮪ ﺳﺎﻝ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﮐُﻞ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﻮﮨﺮ ﺍﭼﮭﯽ ﺟﺎﺏ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﯿﻨﮉﺳﻢ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺟﻮﺍﻥ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﺮﻕ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺳﺎﺱ ﺳُﺴﺮ ﻧﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻮﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮐُﻞ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮨﯿﮟ ۔ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﮭﮕﮍﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮍﯼ ﺳﮩﻞ ﺍﻭﺭ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﮔُﺬﺭ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﻮﮨﺮ ﮨﺮ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﮑﻤﻞ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﻠﺐ ﮐﮯ ﻣُﻄﺎﺑﻖ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﻣِﻞ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺟﺐ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮨﮯ ﯾﻌﻨﯽ ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﮑﻤﻞ ﺧﻮﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺮﺕ ﻣﮩﯿﺎ ﮐﺮﺗﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔُﺬﺍﺭﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﻮ ﺧﻮﺍﮨﺸﺎﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮭﯽ ﻭﯾﺴﯽ ﮨﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﺎﺕ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﮯ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﯽ ﻧﮧ ﻃﻠﺐ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﺗﮭﺎ۔ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺩُﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺖ ﺗﺮﯾﻦ ﻟﮍﮐﯽ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﺮﺗﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﮭﺮ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﺎ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮨﻮﺍ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺩﮬﺎﺭﺍ ﮨﯽ ﺑﺪﻝ ﺩﯾﺎ۔ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﻮﭺ ﮐﻮ ﺑﺪﻻ ﺑﻠﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﺱ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺩﻭﮨﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺟﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺮﻕ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﮧ ﮨﮯ ﮐﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﺱ ﻧﺎﺭﻣﻞ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﯾﮏ ﺧُﻔﯿﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺭﺍﺯ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻭﺍﻗﻒ ﮨﻮﮞ۔ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮐﭽﮫ ﯾﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﺍُﺱ ﺭﻭﺯ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺗﮭﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻨﺪ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺎﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺳﺎﺱ ﺳُﺴﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﯾﻮﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﮈﯾﮍﮪ ﺑﺠﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﻭﻗﺖ ﮨﻮﮔﺎ ﺟﺐ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺑﺎﺯﻭ ﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺍُﭨﮭﺎ ﺩﯾﺎ۔ ﮐﻮﻥ ﮨﮯ؟ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﻓﺘﺎﺩ ﭘﺮ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﯿﺦ ﮐﺮ ﺑﻮﻟﯽ۔ ﺧﺒﺮﺩﺍﺭ ﺟﻮ ﺁﻭﺍﺯ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﯽ ﺗﻮ , ﯾﮩﯿﮟ ﮈﮬﯿﺮ ﮐﺮ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ , ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺠﺎﻧﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺑﻨﺪﻭﻕ ﮐﯽ ﻧﺎﻝ ﻣﯿﺮﯼ ﮔﺮﺩﻥ ﺳﮯ ﺁ ﻟﮕﯽ۔ ﺍﯾﮑﺪﻡ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻭﺳﺎﻥ ﺧﻄﺎ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻑ ﺳﮯ ﻟﺮﺯ ﺍُﭨﮭﯽ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻭﺍﺯ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﻠﻖ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺍﭨﮏ ﮔﺌﯽ ﮨﻮ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺑﻮﻟﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﻮ ﺍُﺱ ﻭﻗﺖ ﺑﻮﻝ ﻧﮧ ﭘﺎﺗﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﺳﭻ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻧﭗ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﭼﻠﻮ ﺍُﭨﮭﻮ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﭼﻠﻮ۔ ﻭﮨﯽ ﻏﺼﯿﻠﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﮭﺮ ﺳُﻨﺎﺋﯽ ﺩﯼ۔ ﻣﯿﮟ ﮐُﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﻑ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﻧﮑﻠﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍُﭨﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﺍ ﺳُﺴﺘﯽ ﮐﯽ ﺗﻮ ﻭﮨﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﻧﺠﯽ " ﺍُﭨﮭﺘﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﮔﮭﻮﮌﺍ ( ﭨﺮﯾﮕﺮ ) ﮐﮭﯿﻨﭽﻮﮞ،؟ ﺍﺗﻨﺎ ﻓﺎﻟﺘﻮ ﻭﻗﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ۔ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﻏﺼﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻑ ﮐﮯ ﻣﺎﺭﮮ ﺑﮩﺖ ﺑُﺮﯼ ﻃﺮﺡ ﮐﺎﻧﭗ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺍُﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﻧﯿﭽﮯ ﮈﺭﺍﺋﻨﮓ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﺁﯾﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﺎﺱ ﺳُﺴﺮ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻮﺭ ﮐﻮ ﻭﮦ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﻻ ﭼُﮑﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺎﻧﺪﮪ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﮐُﻞ ﭼﺎﺭ ﺁﺩﻣﯽ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﻨﺪﻭﻗﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﺎﻧﺪﮪ ﺩﯾﺎ۔ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﯾﺮﻏﻤﺎﻝ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﻣﯿﺮﺍ ﮈﯾﮍﮪ ﺳﺎﻝ ﮐﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺑﯿﮉ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﯿﻼ ﺳﻮﯾﺎ ﭘﮍﺍ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﮐﮯ ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮐُﭽﮫ ﻣﺪﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻥ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﻭﮞ ﭘﺮ ﻧﻘﺎﺏ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﺎ ﺗﻮ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﺳﮩﻤﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﺗﮭﮯ ﮐﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺩﻣﺎﻍ ﮨﯽ ﻣﺎﺅﻑ ﮨﻮ ﭼُﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻥ ﭼُﮑﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﮨﻢ ﻟُﭩﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮯ ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﻟُﭩﺘﺎ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺭﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﻮ ﺍُﻥ ﮐﺎ ﻟﯿﮉﺭ ﻟﮓ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺳُﺴﺮ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﺯﯾﻮﺭ ﭘﯿﺴﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﮩﺎﮞ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺩﮬﻤﮑﺎ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﺍﮔﺮ ﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮨﻮﺷﯿﺎﺭﯼ ﺩﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺷﻮﺭ ﻣﭽﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻓﺎﺋﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﺍ ﺩﯾﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺳﺐ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮨﯽ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﻧﮯ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺁﺋﯽ ﺟﻮ ﮐﮯ ﺷﺎﺋﯿﺪ ﻧﯿﻨﺪ ﺳﮯ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﺍُﺳﮯ ﺗﮭﭙﮏ ﮐﺮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺳﮯ ﺳُﻼ ﺩﯾﺘﯽ، ﺟﺐ ﺍُﺱ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺗﯿﺰ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﻭﮨﯽ ﻟﯿﮉﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﮔﮭﻮﻣﺎ , ﺗﯿﺮﺍ ﺑﭽﮧ ﮨﮯ؟ ﭼﻞ .. ﭼﻞ ﺍُﭨﮫ ﺍﺳﮯ ﭼُﭗ ﮐﺮﺍ ﻭﺭﻧﮧ ﮨﻢ ﭼُﭗ ﮐﺮﺍ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ﺍُﺳﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﺲ ﺧﻮﻑ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺟﮭﺮﺟﮭﺮﯼ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ۔ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭ ﺳﺎﺗﮭﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺯﯾﻮﺭ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﮯ ﭘﺮ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﺎﺱ ﺳُﺴﺮ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻮﺭ ﮐﯽ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺩ ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺍُﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺑﺎﻧﮩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﻮﻻ ﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺑﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ۔ " ﺍﺳﮯ ﭼُﭗ ﮐﺮﺍ ﻭﺭﻧﮧ " ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﭘﮭﺮ ﻏُﺼﮯ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ۔ " ﺍﺳﮯ ﺑﮭﻮﮎ ﻟﮕﯽ ﮨﮯ " ﻣﯿﮟ ﺳﮩﻤﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻮﻟﯽ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ " ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪﯼ ﺳُﻼ ﻭﺭﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﺳُﻼ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﺳﮯ " ﻭﮦ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﮬﻤﮑﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺳﮩﻤﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ " ﻭﮦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻭﺩﮪ ﻧﯿﭽﮯ ﻓﺮﯾﺞ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﺍ ﮨﮯ " ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮑﻞ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ " ﻣﺠﮭﮯ ﮐﭽﻦ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ " ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮈﺍﮐﻮ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻏُﺼﮯ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﮐﭽﻦ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﭼﮭﺎﺗﯽ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼﺅ۔ ﮐﭽﮫ ﺳﻤﺠﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺁ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭﮞ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺍﻧﺠﺎﻥ ﮈﺍﮐﻮ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﭼﮭﺎﺗﯽ ﻧﻨﮕﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﺻﺎﻑ ﺩﮬﻤﮑﯽ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﻧﮯ ﺭﻭﻧﺎ ﺑﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺳﮯ ﻣﺎﺭ ﺩﮮ ﮔﺎ۔ ﺍﯾﺴﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﮐﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮨﯽ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼﺅﮞ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻤﯿﺾ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍ ﺍﻭﭘﺮ ﺍﭨﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﺎ ﻣﻨﮧ ﻣﻤﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺑﮭﻮﮐﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﭼُﻮﺳﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭼﻮﺭ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﮈﺍﮐﻮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﻡ ﺳﮯ ﮈﻭﺏ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﻣﺠﮭﮯ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻋﺰﯾﺰ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﻧﯿﭽﯽ ﮐﺮ ﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼﺗﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﻗﻤﯿﺾ ﮨﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﻮﺭﮮ ﭘﯿﭧ ﮐﯽ ﺟﮭﻠﮏ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﻤّﺎ ﺍﺱ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮈﺍﮐﻮ ﮐﻮ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮯ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﻭﮨﯿﮟ ﭨﮑﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﮨﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺷﺮﻡ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ اچانک مجھے لگا جیسے وہ میرے قریب کھڑا ہے میں نے سر اٹھایا تو وہ واقعی میرے ساتھ کھڑا تھا۔اگرچہ وہ نقاب پہنے تھا لیکن اس کی ننگی آنکھوں سے مجھے واضح ہوس ٹپکتی نظر آئی۔ اس سے پہلے کے میری چیخ نکلتی اس کا ہاتھ میرے منہ پر تھا۔ "اگر اپنے بیٹے کی زندگی چاہتی ہو تو جیسے میں کہوں کرتی رہو اور ذرا بھی آواز نکلی تو سمجھ لو تمہارے بیٹے کی آواز ہمیشہ کیلئے بند کر دوں گا۔" اس کا منہ میرے کان کے قریب تھا۔ لفظوں کی ادائیگی کے ساتھ مجھے اس کی گرم سانسیں بھی اپنی گردن پر محسوس ہوئیں۔ ایک لمحے میں ہزاروں خیالات میرے دماغ میں ابھرے لیکن ہر سوچ دم توڑ گئی کیونکہ میرے بیٹے کی زندگی میرے عمل سے وابستہ تھی اور اس کی زندگی میرے لیئے ہر چیز سے اہم تھی۔ میں نے خود کو حالات کے حوالے کر دیا۔ اس نے میرے بیٹے کو میرے ہاتھوں سے لے کر بیڈ کے قریب پڑے جھولے میں ڈال دیا۔ میں بُت بنی بیٹھی تھی کہ مجھے اس کا ہاتھ اپنے پیٹ پر محسوس ہوا، میں ایکدم سے سمٹ گئی۔ خوف سے میرا بدن لرز رہا تھا۔ اور آنکھوں سے آنسووں کا سیلاب اُمڈ آیا۔ میں چیخنا چاہتی تھی۔ اپنی مدد کیلئے زور زور سے پُکارنا چاہتی تھی لیکن میرے بیٹے کا چہرہ میری آنکھوں کے سامنے تھا۔ جو مجھے کوئی بھی ایسا قدم اُٹھانے سے باز رکھ رہا تھا۔ میں نے دونوں گھُٹنے سکیڑ کر اپنی چھاتی سے لگا لیئے۔ مجھے اس ڈاکو کا یوں میرے پیٹ پر ہاتھ لگانا بالکل بھی اچھا نہیں لگا تھا۔ بلکہ اگر میرے بس میں ہوتا تو میں اُس کو اس حرکت پر اتنے تھپڑ مارتی کے وہ دوبارہ سے کبھی یوں کسی کو ہاتھ لگانے کی ہمت نہ کرتا۔ لیکن اس نے میرے بیٹے کی زندگی کی دھمکی دے کر مجھے بےبس کر دیا تھا۔ "مجھے تُمہارا تعاون درکار ہے، کیونکہ میں ارادہ کر چکا ہوں اور اس سے پیچھے نہیں ہٹوں گا، چاہے مجھے زبردستی کیوں نہ کرنی پڑے، اور زبردستی کے دوران کچھ بھی ہو سکتا ہے کوئی بھی جان سے جا سکتا ہے تُم یا تُمہارا بیٹا۔" وہ تنبیہہ کرنے کے انداز سے بات کر رہا تھا۔ میں نے کانپتے ہوئے اس کے سامنے ہاتھ جوڑ دیئے اور اُسے اس کے ارادوں سے باز رکھنے کی آخری کوشش کی لیکن اُس کی حالت جنون کی سی ہو گئی تھی وہ مجھے مسلنے لگا اس کا ہاتھ میرے جسم پر پھسل رہا تھا اور میں سمٹ رہی تھی۔ وہ میرے پیٹ اور میرے مموں کو اپنے ہاتھ سے مسل رہا تھا۔ میں بچاؤ کے لیئے ہاتھ پاؤں تو مار رہی تھی لیکن منہ سے آواز نہیں نکل رہی تھی۔ شائید اس ڈر سے کے اگر میری آواز نکل گئی تو وہ کہیں بھڑک کر میرے بیٹے کو کوئی نقصان نہ پہنچا دے۔ وہ مسلسل میرے جسم کو نوچ رہا تھا۔ آخر میری مزاحمت دم توڑ گئی۔ مجھے ڈھیلا پڑتا دیکھ کر اس نے بندوق ایک طرف رکھی اور دونوں ہاتھ میرے مموں پر رکھ دیئے۔ وہ کسی وحشی درندے کی طرح میرے اوپر چڑھ آیا۔ میں مکمل اس کے رحم و کرم پر تھی۔ اس نے دونوں ہاتھ میری قمیض کے اندر ڈال دیئے اور اپنی انگلیوں سے میری نپلز کو چھیڑنے لگا۔ کسی بھی لڑکی اور عورت کو اگر سب سے زیادہ کسی چیز کا خوف ہوتا ہے تو وہ اس کی عزت جانے کا۔ اس کے بچاؤ کیلئے کوئی بھی لڑکی یا عورت اپنی جان تک گنوا سکتی ہے اور ایسا ہوتا بھی ہے۔ لیکن اگر یقین ہو جائے کے وہ کسی صورت اپنی عزت نہیں بچا پائے گی تو اس کا خوف ختم ہو جاتا ہے۔ لیکن اگر لڑکی یا عورت ماں ہو تو اس کیلئے اولاد ہی سب کچھ ہوتی ہے۔ اور ایسے بہت سے قصے آپ نے بھی سُنے ہونگے جب کسی لڑکی یا عورت نے اولاد کیلئے اپنی عزت تک گنوا دی ہو۔ میں بھی اگر عام لڑکی ہوتی تو شائید مر جاتی لیکن کسی ڈاکو کے ہاتھوں یوں عزت نہ گنواتی لیکن میں ایک ماں تھی اور اس ڈاکو نے مجھے میرے بیٹے کی زندگی کی مجھے دھمکی دی تھی۔ یہی وجہ تھی کے وہ میرے جسم کو بھنبھوڑ لینا چاہتا تھا اور میں اسے روک نہیں پا رہی تھی۔ مجھے یقین ہو گیا تھا کہ اب بچاؤ ناممکن ہے اور یہی وجہ تھی کے مجھے خوف بھی نہیں رہا تھا۔خوف تب تک ہی رہتا ہے جب تک بچاؤ کی کوئی صورت نظر آتی رہے لیکن مجھے کوئی صورت نظر نہیں آ رہی تھی۔ ان لمحوں میں جب میں خوف کی حدود سے نکل رہی تھی ایک مرد میرے بدن سے لذت لے رہا تھا۔ یعنی خوف کا اختتام لذت کی شروعات پر تھا۔ اور میں بھی اس ڈکیت کے ساتھ لذت کے اس گہرے سمندر میں غرق ہونے لگی۔ اس کا میری نپلز کو مسلنا مجھے میٹھے درد کے ساتھ لذت بھی دے رہا تھا۔ میرے گول مٹول خوبصورت ممّے تن گئے۔نپلز اکڑ کر سخت ہو گئے۔بدن میں جیسے سرور چھانے لگا۔ مجھ پر مستی چھانے لگی تھی جس کا اظہار میں نے اس ڈاکو کی کمر پر ہاتھ پھیر کر کیا۔ میرے ہاتھ بھی اب اس کی کمر پر گردش کر رہے تھے۔وہ مجھے پر جھکا ہوا تھا اس طرح کا ردِعمل دیکھ کر وہ پورا میرے اوپر لیٹ گیا جس سے اس کا لن میری رانوں کے درمیان رگڑ کھانے لگا۔ میری عجیب حالت ہو رہی تھی۔ میں نہ چاہتے ہوئے بھی اس کا ساتھ دینے لگی۔ میں اس کے لن کو محسوس کرنے کیلئے اپنی گانڈ ہلا رہی تھی۔ جس سے اس کا لن میری رانوں کے درمیان رگڑ کھا رہا تھا۔ میں نے ہاتھ اس کے نقاب پر ڈال کر اس کا نقاب اتارنا چاہا تو اس نے فوراً میرے ہاتھ کو پکڑ لیا اور میرا بازو موڑ کر میرے ہاتھ کو میرے سر تک لے گیا پھر اس نے دوسرے ہاتھ کو بھی ویسے ہی موڑ کر میرے سر کے پیچھے کر دیا۔ اور میرے دونوں ہاتھ اپنے ہاتھ میں مضبوطی سے پکڑ لیئے۔ وہ نقاب پہنے ہوئے ہی میرے مموں پر کاٹ رہا تھا۔ اس کے یوں کاٹنے سے مجھے درد تو ہو رہی تھی لیکن جو لذت مل رہی تھی اس کو بیان کرنا ممکن نہیں۔ اس کا جنون میرے لیئے نیا تھا۔ میرے شوہر سیکس کے دوران کبھی ایسی جنونی کیفیت میں نہیں گئے تھے۔ ان کی میرے بدن سے چھیڑ چھاڑ بڑی شائستہ ہوتی تھی۔ وہ ٹھہر ٹھہر کر اور بڑے سنبھل سنبھل کر ہاتھ لگاتے تھے۔اُن کا کسنگ کرنے کا انداز بھی بڑا سوفٹ تھا۔ وہ سیکس کے دوران مجھ سے ایسے برتاؤ کرتے جیسے میں کانچ کی بنی ہوں اور اُن کی بے احتیاطی سے کہیں ٹوٹ نہ جاؤں۔ لیکن اس ڈاکو کا انداز بالکل بے رحمانہ تھا۔ اس کے ہاتھ بےدردی سے مجھے مسل رہی تھے۔ وہ اب میرے گالوں اور ہونٹوں پر کاٹ رہا تھا۔لیکن یہ کاٹنا کسی حد تک پیٹ اور ممّوں پر کاٹنے کی نسبت تھوڑا سوفٹ تھا۔ میں اس کے ہونٹوں کا لمس اپنے ہونٹوں پر محسوس کرنا چاہتی تھی لیکن اس کا نقاب ایسا نہیں ہونے دے رہا تھا۔ مجھے نقاب سے اُلجھن ہونے لگی تو میں نے اسے کہہ دیا کہ مجھے اس کے نقاب سے الجھن ہو رہی ہے۔ اسے لگا شائید میں اس کا نقاب اُتروا کر صرف اس کا چہرہ دیکھنا چاہتی ہوں تو اُس نے نقاب اُتارنے سے انکار کر دیا۔ لیکن میرے چہرے پر بیچینی اور الجھن کے تاثرات دیکھ کر اس نے نقاب اُتار پھینکا۔وہ ایک مضبوط جسم کا مالک تھا اور چہرے مہرے سے بھی ایک خوبرو جوان تھا ۔ نقاب اُتارتے ہی وہ مجھے بڑی بے رحمی سے چومنے چاٹنے لگا۔ اُسے بھی شائید نقاب میں مزہ نہیں آ رہا تھا۔ اسی لیئے اُس نے نقاب اُتار پھینکا تھا۔اسکے نین نقش چوڑیاں فلم کے ہیرو معمررانا جیسے تھے اور سینہ چوڑا جیسے میرے وجود کا لمس پا کر دراز ھوا تھا میرا دل کیا کہ میں اسکا نام پوچھ لو مگر شرم آڑے آ گئ‎ ‎ اُس کے ہونٹ میرے ہونٹوں سے لگتے ہی جیسے دھماکہ ہوا اور آگ جیسے بھڑک اُٹھی۔اس کے دونوں ہاتھ میرے ممّوں کا مساج کر رہے تھے
  2. Thanks Doctor sahab k ap ny is ko phr sy shuru kiya ab umeed hy k ap isy jari rakhen gy hamary LIYE ..... 1 bar phr sy Thanks
  3. #پدو ماوتی اور شاھد #Last_Episode #ایک_بھارتی_حسینہ اور امریکی ڈاکٹر کیساتھ پاکستانی بزنس میں محبتوں پر تحریر کیا گیا بہت پاپولر ناول کامنی نے مسٹر شاھد کیساتھ بطورہیروئن کام کرتے ھوۓ چالیس فی صد تک مووی کی شوٹنگ مکمل کروادی ساری مووی واشنگنٹن میں شوٹ ھوئی بھارتی اداکارہ پاکستانی بزنس مین کے ساتھ #بولڈ_سین_پکچرائزڈ کرتے وقت نروس ھو کامنی نے مسٹر شاھد کیساتھ بطورہیروئن کام کرتے ھوۓ چالیس فی صد تک مووی کی شوٹنگ مکمل کروادی ساری مووی واشنگنٹن میں شوٹ ھوئی بھارتی اداکارہ پاکستانی بزنس مین کے ساتھ #بولڈ_سین_پکچرائزڈ کرتے وقت نروس ھو جاتی مسٹر شاھد بھی بھارتی حسینہ کی زلفوں کے اسیر ھو چکے تھے انہوں نے شوٹنگ کے دوران دو مرتبہ سین دیئے جسمیں بوس وکنار ھوتے ھوۓ دکھایا گیا تھا کامنی کا پہلا تجربہ تھا سیکس کا تو وہ اکثر رومانٹک سین میں نروس ھوجاتی اور ڈرائیکٹر کٹ بول دیتا دونوں کو ریہرسل کر کے پھر رومانٹک سین دینا پڑتا کامنی اب پوری طرح سے گرم ھوچکی تھی کیونکہ لاسٹ سین میں شاھد نے اسکو خوب کس کیا اور اسکی برا کی ہک کھول دی اور اسکے اوپر لیٹ کر کس کرتا ھوا شاھد اپنا لنڈ اب کامنی کو چوت پر رگڑتا تھا گوکہ شاہد جان بوجھ کر نہیں کر رھا تھا پر کنواری اور خوبرو حسینہ کامنی کا پورا جسم سرور اور حوس سے پوری طرح گرم ھو چکا تھا کامنی کا بھی کوئی قصور نہ تھا کیونکہ اس نے مووی میں چدائی کے سین میں رنگ بھرنے کی اور رومانس کرنے کی پوری کوشش بھی کی اسی دوران مسٹر شاھد نے اسکے تنے ھوۓ نپل بھی مسل اپنے ہاتھوں کا لمس اسکے بدن پر محسوس کروا کے پاکستانی شاہین نے اس ہندو چھوری کو پوری طر ح گرما دیا تھا مگر پھر بھی براڈ پٹ نے کامنی کو #ری_ٹیک_پرمجبور کیا تو اسکو ایسے سین دوبارہ شوٹ کروانے پڑے تھے آج مووی کی شوٹنگ کی دسویں شب تھی کامنی ھوٹل میں لیٹی ھوئی تھی نیند اس سے کوسوں دور تھی بے چاری سوچ رھی تھی کہ ابھی دوسین ریکارڈ ھوۓ ھیں تو اسکی یہ حالت ھے تو کل کیا ھوگا کیونکہ سکرپٹ کے مطابق کامنی نے پدوماوتی کا #رول_پلے_کرتے ھوۓ پاکستانی بزنس مین کیساتھ رومانٹک سین دینے تھے اسمیں شاھد نے اسکو پہلی دفعہ پدوماوتی کے گھرمیں مختلف انداز سے چودنے والا سین بھی شامل تھا جسمیں پدو ماوتی نے پریگنٹ ھو جانا تھاکامنی نے علی الصبح ناشتہ کیا اور سات بجے آڈیٹوریم حال جہاں پر پدوماوتی مووی کا سیٹ لگایا گیا تھا پہنچ کر شوٹنگ سٹارٹ کر دی شنکرکا رول گلباز گیلانی نے پلے کرنا تھا جب شنکر اپنی بیوی کو چھوڑ کر بھارت جاتا ھے تب مسٹر شاہد کو پدوماوتی اپنے گھر پر بلالیتی ھے پدوماوتی یعنی کامنی پرکاش نے مسٹر شاھد کو بولا یار بہت پرجوش ھو جاتی ھوں میں جب آپ سے رومانٹک اور بولڈ سین کرواتی ھوں مسٹر شاہد نے کہا مجھ سے بھی کنٹرول نہیں ھوتا مگر میں کسی مجبور کی مجبوری کا فائدہ نہیں اٹھانا چاھتا کامنی بولی کیسافائدہ تو شاھد بولا رومانس میں سرحدیں نہیں توڑ سکتا ورنہ دل تو کرتا ھےرام کی گنگامیلی کر دوں کامنی مسٹر شاھد کی بات سن کر بولی آپ تو شادی شدہ ھو میری طرف دیکھو میں نے خود کو بہکنے سے روک رکھا ھے ودنہ آپکا وہ میری ٹانگوں میں جگہ بنانے کو تیار ھے مسٹر شاھد بولا آپ کے جسم میں وہ کشش ھے کامنی جی کہ بندہ آپکی قربت میں یہ غلطی تو کریگا ھی براڈ نے مسٹر شاھد کو بولا چلو شوٹنگ سٹارٹ کرو سین سمجھاتے ھوۓ براڈ نے کامنی سے کہا کہ ھر سین آج کا جارحانہ اور بولڈ ھے اسی لئیے اپنے کر دار سے پدو ماوتی کا اصلی رنگ بھر دو کریکٹر جاندار ھے آپکا سیٹ پر سارے پرڈیوسر آپکی تعریفیں کر رھے ھیں تم بہت پاۓ کی اداکارہ بنوگی ایک دن کامنی نے شکریہ ادا کرتے ھوۓ کہا سر میں اور موویز بعد میں سائن کرونگی مگر ابھی تو پدو ماوتی چیلنج ھے میرے لئیے کامنی نے سفید لہنگا اور ریڈ ٹاپ پہنا ھوا تھا پینٹ شرٹ مسٹر شاھد نے پہنی ھوئی تھی کامنی نے ایکشن سنتے ھی مسٹر شاھد کو کس کرنا شروع کر دیا مسٹر شاھد نے بھی کامنی کو اپنے سامنے والی میز پر بٹھا دیا اور اسکا لہنگا نیچے گرا دیا کامنی اب برا اور پینٹی میں تھی کالی برا اور ریڈ پنیٹی میں #ملبوس _بھارتی اداکارہ نے اپنی ٹانگیں ٹاپ لیس ھوکر کھڑے مسٹر شاھد کی کمرکے گردلپیٹ دیں مسٹر شاہد نے کامنی کو کس کرنا شرو ع کر دیا اس کالنڈ اب کامنی کی چوت پر لگ رہا تھا کامنی بہت مست ھو چکی تھی اسکی چوت اب گیلی ھو چکی تھی مسٹر شاھد نے اپنا ہاتھ نیچے لے جاکر کامنی کی پنٹی کو ایک طرف کرکے اپنا لنڈ جیسے ھی زپ کھول کرکامنی کی چوت پر رکھا تو کامنی نے جلد اسکو ہاتھ میں پکڑ لیا اور اپنی چوت پر ھاتھ رکھ دیا اف آہ مسٹر شاھد بہت مزہ آ رھا ھے براڈ پٹ نے یہ سین مکمل ھوتے ھی کہا واؤ آمیزنگ ایکٹنگ مس کامنی بریلئنٹ سارے سیٹ تالیوں کے شور سے گونج اٹھا کامنی اور شاھد کی اداکاری کو بہت سراہا گیا اگلا سین کی ریہرسل کا بول کر براڈ پرڈیوسر کیساتھ باھر چلے گئے مسٹر شاہد نے کامنی کو روم میں لے جاکر اگلے سین پر ریہرسل کرنے کا بولا سین میں کامنی نے لانگ شرٹ پہن کر روم میں آنا ھے اور اپنی پینٹی اتار کر شاھد کو لٹا کر اسکے اوپر بیٹھ کر چادر اوپر لیکر چند گھسے مارنا تھے بس اور تھوڑا سا مکالمہ تھا بس گوکہ اگلے سین بہت آسان تھے مگر شہوت بخار بن کر ان دونوں کو چڑھ چکی اگلا سین کی ریہرسل کا بول کر براڈ پرڈیوسر کیساتھ باھر چلے گئے مسٹر شاہد نے کامنی کو روم میں لے جاکر اگلے سین پر ریہرسل کرنے کا بولا سین میں کامنی نے لانگ شرٹ پہن کر روم میں آنا ھے اور اپنی پینٹی اتار کر شاھد کو لٹا کر اسکے اوپر بیٹھ کر چادر اوپر لیکر چند گھسے مارنا تھے بس اور تھوڑا سا مکالمہ تھا بس گوکہ اگلے سین بہت آسان تھے مگر شہوت بخار بن کر ان دونوں کو چڑھ چکی تھی کامنی نے جب اپنی پینٹی اتار دی تو اس نے ریہرسل کرتے ھوۓ مسٹر شاھد کی رانوں پر اپنی گانڈ رکھ کر اسکو اپنے لبوں کے جام پیش کر دئیے مسٹر شاھد نے بھی اسکی زبان چوسنا شرو ع کر دی تھی کامنی کی چوت اب گیلی ھو چکی تھی لن اور چوت کے درمیان ایک کپڑے کا فاصلہ تھا تب مسٹر شاھد نے کامنی کو نیچے لٹایا اور اسکی ٹانگوں میں آگیا کامنی نے اپنی ٹانگیں کھول دیں تھی اور شاھد نے کامنی کی پینٹی کو ایک طرف کرکے اپنا لنڈ اسکی گوری چوت پر رکھا اور کامنی نے سمائل دی مسٹر شاھد کو اور اپنا ھاتھ نیچے لے جاکر بولی پلیز صرف اوپر اوپر ھی اندر مت ڈالنا میں ‏Virgin‏ ھوں پلیز اندر مت ڈالنا مزہ لینا ھے تو اوپر اوپر سے کرلو میں خود رگڑ دیتی ھوں کامنی نے اب شاھد کا لنڈ پکڑ کر اپنی کنواری چوت کے سوراخ پر رگڑنا شرو ع کر دیا تھادونوں طرف سرور کی لہریں دوڑ رھیں تھیں مسٹر شاھد نے نرم جگۂ پاکر ایک زور کا گھسامارا اور اسکا کنگ کوبرے جیسا لنڈ کامنی کے ھاتھ سے نکل کر اسکی پنک چوت میں چلاگیا #لنڈ_کی ٹوپی کامنی کی چوت میں چلی گئ ...... مسٹر شاہد کالنڈ اندر جاتے ھی کامنی کی چیخ نکل گئ اس سے پہلے کہ وہ سنبھلتی مسٹر شاھد نے ایک جھٹکا اور مارا اور شاھد کا لنڈ سیل توڑتاھوا کامنی کو چوت کی گہرائیوں میں چلا گیا ھند سندھ کا باڈر لنڈ کے اندر جاتے ھی جنگ کے جیسی چیخ و پکار کی آواز پیش کرنے لگا ھو جیسے #اوئی_ماں میں .......مرگئ آہ نکالو باہر........ شاھد پلیز بہت درد ...............ھورھا ھے مسٹر شاھد نے بھی اب کامنی کو دبوچ رکھا تھا اور اسکو کس کرنا شروع کر دیا تھا چند منٹ کسنگ کے بعد کامنی کی سانسیں بحال ہوئیں تو مسٹر شاھد نے کامنی کی پنک چوت میں اپنا لنڈ آ گے اور پیچھے کرنا.......... شروع کر دیا مسٹر شاھد کا لنڈ خون سے سرخ ھو چکا تھا پر پھر بھی شاھد نے تیزی سے اپنالنڈ کامنی کی چوت میں ڈالنا شرو ع کر دیا اب کامنی کو بھی مزہ آنے لگا ..............اس نے بھی اب شاھد کو اوپر تک کھینچ لیا تھا دونوں کے جسم اب مس ھورھے تھے کامنی کی سسکاریاں بڑھنے لگیں تھیں آہ واؤ اف آؤ چ مسٹر شاھد کے لنڈ پر چوت اچھالتے ھوۓ #کامنی_نے اب پانی چھوڑ دیا مسٹر شاھد نے بھی بھارتی چوت کو اپنے سفید مادے سے بھر دیا تھا دونوں پہلے ملن کے بعد ایک دوسرے کیساتھ لپٹ گئے تھےمسٹر شاھد واشنگٹن میں مصروف تھے جب شنکرنے فون کیا سرجی مبارک ھو پدو ماوتی کو بچہ ھوا ھے...........Congratulations #نارمل_ڈلیوری کیساتھ مسٹر شاھد نے بھی شنکر کو مبارکباد دی اور واپس پدو ماوتی کا ٹائٹل پروجیکٹ مکمل کرکے کیلی فورنیا چلے گئے #مووی پدو ماوتی کے بھارت میں ریلیز ھونے پر ھندؤں نے بہت جلوس نکالے منوہر پرکاش کو ہریانہ پولیس نے محفوظ مقام پر منتقل کر دیا اور اسکی زمین واپس مل گئ تھی کیونکہ پدو ماوتی مووی نے بہت بزنس کیا تھا پدو ماوتی کے بچے کو دیکھنے جب شاھد اسکے گھر گیا تو پدو ماوتی نے پیارے سے بچے کو شاہد کی جھولی میں ڈال کر کہا اس بچے کا نام حمزہ رکھیں گے تو پدو ماوتی کی بات سن کر سارے مسکرا دئیے #پھر پیری بولی دو ماہ بعد حمزہ کے ساتھ ھمارے بچے بھی شامل ھو جائینگے #سوزی اور پیری #کھکلا کر ھنس دیں پدو ماوتی مووی کی ریکارڈ بزنس پر اس جوڑی اور پرجیکٹ بھی ملے اور پھر کامنی نے بھی پیری کی رضامندی سے شاھد کیساتھ شادی کر لی #ختم شد.. ‏‎ ‎ ‏‎ ‎
  4. #پدو ماوتی اور شاھد Episode 56 #ترے _جمال _کی رنگینیاں ارےتوبہ۔۔۔! بہار دیکھ کرتیرا شباب ..! جلتی ہے #کامنی_ نے آخر کار مسٹر شاھد کیساتھ پدوماوتی پر بننے والی مووی سائن کر دی بروس پرفیوم برانڈ کی ٹاپ ماڈل کامنی کا شمار ماڈلنگ کی صف اول کی ماڈلز میں ھوتا تھا پر اس نے کسی ٹیلی رومانٹک مووی میں پہلی بار شرکت کرنا کامنی نے آخر کار مسٹر شاھد کیساتھ پدوماوتی پر بننے والی مووی سائن کر دی بروس پرفیوم برانڈ کی ٹاپ ماڈل کامنی کا شمار ماڈلنگ کی صف اول کی ماڈلز میں ھوتا تھا پر اس نے کسی ٹیلی رومانٹک مووی میں پہلی بار شرکت کرنا تھا #مووی کا ٹائٹل #پدوماوتی_اور_شاہد تھا جسمیں کہانی ایک پاکستانی بزنس مین کو ایک ورکر کے بیوی سےپیار ھوجاتاھے یہ سب شاھد کی برتھ ڈے پارٹی پر ھوتا ھے جب اسکا شوہر شنکر اوبراۓ شراب میں دھت ھوجاتاھے تو ڈاؤن دی فلور پدوماوتی ایک پیگ بناتے ھوۓ گلاس گرا دیتی ھے تو جب گلاس کا کچرا اکٹھا کرتی ھے تو شاھد کو اس کے بوبز نظر آتے ھیں تو شراب کے نشے میں ڈوبا ھوا یہ پاکستانی بزنس مین بھی یہی لمحے کو کیش کرتا ھے اور پدو ماوتی لڑکھڑاتے بزنس مین کو اسکے روم تک چھوڑنے جاتی ھے تو وھاں پر پاکستانی بزنس مین ھند اور سندھ ایک کر دیتا ھے ‏ ‏#سکرپٹ پڑھ کر بھارتی ماڈل کامنی نروس تو تھی پر اسے ڈالر کی ضرورت تھی کیونکہ بھارتی شہرہریانہ میں کامنی کے باپ کی زمین کی چھے ماہ بعد نیلامی تھی کیونکہ بینک سے لیا گیا#لون کامنی کے باپ منوھر پرکاش نے مقررہ مدت تک واپس نہیں ‏#سکرپٹ پڑھ کر بھارتی ماڈل کامنی نروس تو تھی پر اسے ڈالر کی ضرورت تھی کیونکہ بھارتی شہرہریانہ میں کامنی کے باپ کی زمین کی چھے ماہ بعد نیلامی تھی کیونکہ بینک سے لیا گیا #لون کامنی کے باپ منوھر پرکاش نے مقررہ مدت تک واپس نہیں کیا تھا براڈ پٹ اور شاھد نے کامنی سے وعدہ کیا تھا کہ اگر پدو ماوتی ہٹ ھوگئ تو اسکا پچاس فی صد #پرافٹ بھی اسکو ملیگا اور ساری آمدنی کا حساب لگایا جاۓ تو آپکی ھریانہ کی زمین چھڑائی جاسکتی ھے. کامنی ھم سب سرحدوں میں قید ھیں پر انسان تو ھیں آپ پریشان نہ ھو ھم سب آپکے ساتھ ھیں مسٹر شاھد نے کامنی کے کندھے پر رکھا اور اسکو تسلی دی اور کامنی نے کہا میں رومانسی سین دیکھ کر بہت گھبرا رھی ھوں ‏#میں نے آج تک کسی بھی رومانٹک ایڈ میں کام نہیں اب ایک دم آپکے ساتھ سیکسی سین پکچرائز ھونگے تو بھارتی جنتا ان سین کو دیکھ کر مشتعل ھو جانا ھے آپکو شاید یہ نہیں معلوم کہ بھارت میں ظلم صرف مسلمانوں پر ھی نہیں ھوتا نچلے طبقے کے ھندو بھی برہمن اور خطریوں سے محفوظ نہیں ھیں راج صرف پیسے والوں کا ھے سارے ھندو ایک ھی رام کو نہیں مانتے کچھ ھندو سری کرشناکو بھگوان مانتے ھیں کوئی کالی ماں کو بھگوان کہتاھے تو کوئی راون کو تو کوئی شنکر کو ایسے میں فساد ھونا صرف ھندو مسلم ھونے پر ھی نہیں بلکہ #اچھوت ہندؤوں کے مندر بھی الگ ان کا گنکا جل الگ انکاپنڈٹ الگ گھاٹ الگ بہت پریشانیاں ھی ھمارے لئیے مگر سب سے بڑی بات پتہ ھے بھلا کیا ھے مسٹر شاہد؟ کامنی نے شاہد اور براڈ کو مخاطب کرتے ھوۓ کہا کہ ساری دنیا بیشک مسلمانوں کے بارے میں اچھا نہیں سوچتی مگر اندر ھی اندر اسلام کے چودہ سو سال پہلے بنے یکساں قوانین کا پاسداری کرتی ھے ساری قومیں برابری کے پلڑے میں انسان کو نہیں تول سکتی. مگر مسلمان سارے ایک صف میں کھڑے ھوتے ھیں کوئی صاحب نہیں ھوتا نہ کوئی نچلی ذات نہ اونچی سب کے سب ایک ھیں بس یہی بات اور یکسانیت دوسری قومیں دیکھتی ھیں تو بہت حسد کرتی ھیں مسٹر شاھد نے کہا کامنی اسی لئیے تو بول رھا ھوں مت گھبراؤ ان سے یہ لوگ کسی کے نہیں ھیں آپ چاھو تو انکار کر سکتی ھو اس مووی میں کام کرنے سے ھم نے کسی گوری کے سنہری بالوں کو بلیک کلر دیکر ساری مووی بنا دینی ھے اور اس نے فری میں مزہ بھی دے دیناھے ریہرسل کرتے وقت ھم تو صرف نیچرل فیس دینا چاھتے ھیں #براڈ پٹ نے کہا پھر بھی آپکے پاس سوچنے کا وقت ھے آ ج کا دن اگر کسی سے مشاورت بھی کرنی ھے تو کرلو ھم آپکو وقت دیتے ھیں براڈ پٹ اور شاھد اٹھ کر باھر چلے گئے تب کامنی سوچنے لگی اور اس نے اپنے باپ منوہر پرکاش کو فون پر ساری تفصیلات بتادی اور بحث و تکرار شروع ھوگئ باپ اور بیٹی کی باھر لان میں بیٹھے شاھد اور براڈ بیٹھے اخبار پڑھ رہے تھے انکو یقین تھا کہ کامنی نہ بھی مانے تو بھی بھارتی لڑکی کا جگاڑلگالیا جاۓگا کیونکہ واشنگٹن میں مسٹر شاھد کا ایک دوست رھتا تھا جسکی بہن پریانکا ایک مشہور ٹی وی ڈارامہ ایکٹر ھے اور سلور سکرین پر پریانکا کاکافی نام تھا پریانکا دیسی رول میں پرفارمنس دیکر بہت سارے ایوارڈ جیت چکی ھے فون پر لگی کامنی پرکاش کا دھیان ان دونوں کی باتوںپر ھی تھا پریانکا کا سن کر کامنی نے ایک لمحے کال ھولڈ کرکے کے مسٹر شاہد کو کھا جانے والی نظروں سے دیکھا اسکو دیکھ کر مسٹر شاہد مسکرا دئیے براڈ پٹ نے اپنا موقف پھر سے دہرایا کامنی کیساتھ اور پھر چلے گئے جاتے وقت ڈرائیکٹر براڈ پٹ نے سرد مہری کا مظاہرہ کرتے ھوۓ کہا کامنی ساری کاسٹ آج رات تک فائنل کر دی جاۓگئ اور پھر کل شام ٹیم میٹنگ رکھی جائیگی سب کچھ بہت جلد فائنل کر دیا جاۓگا اور پرسوں سنڈے کو اس مووی کے سکرپٹ پر کام شروع کر دیا جاۓگا تب تک ہاں یہ ناں کا سو چ کر بتادو جی سر میں کوشش کرونگی چند گھنٹوں میں آپ کو انفارمیشن دی جائیگی آپ پھر اپنا فیصلہ شاہد کو بتا دینا کل ساری ٹیم میٹنگ کے بعد فلم کی #شوٹنگ_شروع کر دی جی سر میں کوشش کرونگی چند گھنٹوں میں آپ کو انفارمیشن دی جائیگی آپ پھر اپنا فیصلہ شاہد کو بتا دینا کل ساری ٹیم میٹنگ کے بعد فلم کی #شوٹنگ_شروع کر دی جائیگی مسٹر شاہد اور براڈ باھر چلے گئے جبکہ پیری اور کامنی بیٹھ کر گپ شپ کرنے لگیں. #پدو_ماوتی اور شنکر اوبراۓ اپنے پھر ملنے پر بہت رومانٹک ھوگئے تھے پدو ماوتی نے شنکر سے کہا دیکھو شنکر مجھ سے جو غلطی ھوئی اس پر تم بھی دوشی ھو تم نے صرف اور صرف جاب پر اپنا فوکس رکھا اور مجھے تم نے ایک دم اپنے سے دور کر دیا پدوماوتی نے کہا آپکو تو خوش ھونا چاھئیے. بیڈپر لیٹے ھوۓ شنکر ایک دم چونک کر بولا کس بات پر خوش ھونا چاھئیے مجھے تو پدوماوتی بولی کہ میں نے کوئ راہ جاتے سے ھوۓ سے تعلق نہیں بنایا بلکہ ایک تیرسے دو شکار کیئے ھیں شاید آپکو معلوم نہیں ھے کہ آپکی پرموشن بھی میری مرہون منت ھے اب آپ جب چاہو جہاں چاھو چھٹی لیکر آؤ اور جاؤ میری ایک کال پر آپکو چھٹی مل جایا کریگی اور ڈالر الگ سے ملاکرینگے اور دوسرا شکار پیری جو میرے ہاتھ کی ھے اور سارے معاملات ھمارے کنٹرول میں ھونگے پدوماوتی کی ساری باتیں سن کر شنکر بولا کہ بہت اچھی طرح سے ہاتھ صاف کیئے آپ نے مسٹر شاھد پر اب ساری گیم الٹ پلٹ دی آپ نے مجھے تمہاری #کارکردگی پر بہت فخرھے پدو جی پدو ماوتی ھنس کر شنکر سے لپٹ کر بولی شام سویرے بس شنکر کی موجیں ہی موجیں دونوں ھنس کر لوٹ پوٹ ھوگئے اور پدو ماوتی نے کامیابی کیساتھ شنکرکو گمراہ کیا اور اپنےاور شاہد کے تعلقات کے اگلے مر حلے آسان کرلئیے کامنی نے پدوماوتی سائن کرلی اور ایڈوانس ملنے والی رقم ہریانہ ٹرانسفر کر دی کامنی اب شوٹنگ کےدوران پدوماوتی بن گئ تھی شوٹنگ کیلئے واشنگٹن کے دو پلازوں سمیت چند بزنس ایریا میں ایک ماہ میں مکمل ھونا تھی #کامنی اور شاہد مووی کا ابتدائی سین کامیابی کیساتھ شوٹ کراو چکے تھے اب انکا ایک رومانٹک سین تھا کامنی کو شارٹ شرٹ اور نیکر پہن کر شاہد کے ننگے بدن سے لگ کر کس کرنا تھا اور شیلف پر بیٹھنے سے پہلے اپنی نیکر گرا کر اپنی ٹانگیں مسٹر شاھد کیساتھ چدائی جیسے سین میں رنگ بھرنا ھوتا ھے کامنی نے ڈرائیکٹر کا اشارہ پاتے ھی مسٹر شاھد کو کس کرنا شروع کر دیا اور اپنی نیکر نیچے گرادی اور مسٹر شاھد کی ننگی کمر کے گرد اپنی ٹانگیں لپیٹ دیں #کامنی کی گوری گوری رانیں چمک رھیں تھیں اسکا ٹاپ شاھد نے اتار دیا تھا ایک بھارتی حسینہ پاکستانی ادکار کو بوس و کنار والے رسپانس دیتے ھوۓ پوری گرم ھوچکی تھی کہ ڈرائیکٹر نے کٹ بول دیا ......... ‎ ‏‎ ‎
  5. Lejiye janab last episode. #میری_ساس_میری_سہیلی #قسط_19 #آخری_قسط میں چاہنے کے باوجود اس وقت اسے اپنے اندر سمو لینے کی پوزیشن میں ہر گز نہ تھی کیونکہ بیگم صاحبہ کے آنے کا پروگرام بھی تھا . میں نے دینو کو کرسی پر بیٹھا دیا اور خود اس کے گلے میں باہیں ڈال کے اسکی آغوش میں بیٹھ گئی اسکی گردن پر بوسہ دیتے ہوئے کہا دینو تم آج نہیں کل واپس جا رہے ہو . دینو : "نہیں نوشی جی میری تو ٹرین پر آج شام کو سیٹ بک ہے" میں : دینو ہم نے تمھارے لئے کل شام کی سیٹ بک کرا دی ہے . دینو : مگر کیوں بیبی جی . میں تو یہی بتا کر آیا تھا . میں : وہ میں نے فون کر دیا ہے ابو امی سے بات ہو گئی ہے . دینو : ٹھیک ہے بیبی جی اگر اسی میں آپ خوش ہیں تو میں بھی خوش . میں : خوش تو میں رات سے ہوں اور آنے والی رات بھی ہونگی . یہ سنتے ہی دینو کے لن نے انگڑائی لی تو مجھے بہت اچھا لگا . میں دینو کی آغوش میں بیٹھی تھی اور لن پر ہولے ہولے گانڈ سے دباؤ بھی ڈال رہی تھی . میں نے دینو کو چوم کر کہا : " دینو اس بار نہ تم اکیلے سفر کرو گے نہ میں تمہاری ہم سفر ہونگی . بلکہ تم کسی اور کے ساتھ جاؤگے . دینو : بیبی جی اگر آپ نہیں تو اور کون جائیگا پنجاب. میں : دینو ؛ بیگم صاحبہ نے جانا ہے اور وہ بھی ٹرین میں تمہارے ساتھ جائیں گی . میں یہی تمھیں کہنے ائی ہوں کہ راستے میں بیگم صاحبہ کا پورا پورا خیال رکھنا وہ میری ساس ہیں مجھے امید ہے تم شکایت کا کوئی موقع نہ دوگے . یہ سنتے ہی ڈینو کے لن نے اتنی شدت سے سر اٹھایا کہ مجھے اپنی گانڈ کو اوپر اٹھا کر اس کے لئے راستہ بنانا پڑا . اتنے میں دروازے پر ناک ہوئی میں جلدی سے ڈینو کی آغوش سے اٹھی مگر بیگم صاحبہ اندر آ چکی تھیں اور مجھے دینو کی آغوش چھوڑتے ہویے انہوں نے دیکھ لیا تھا . مگر وہ اگنور کر کے انجان سی بن گئیں . دینو بھی اٹھ کر کھڑا ہو گیا تھا , بیگم صاحبہ کی نظریں دینو کی تنبو بنی قمیض پر جم کر رہ گئیں , میں شرمندہ سی ہو گئی کیونکہ دینو کے تنبو کی وجہ تو میں ہی تھی . بیگم صاحبہ نے سر کو جھٹکا جیسے وہ کسی خیال سے چوکیں ہوں . اور مجھ سے بولیں بیگم صاحبہ : نوشی جان تم نے دینو کو پروگرام بتا دیا , اسے میرے ساتھ جانے پر کوئی اعتراض تو نہیں . میں : نہیں بیگم صاحبہ ؛ بھلا دینو کو کیا اعتراض ہو سکتا ہے کیوں دینو تمھیں بیگم صاحبہ کے ساتھ ٹرین میں سفر کرنے میں کوئی مشکل تو نہیں . دینو : نہیں جی مجھے تو خوشی ہوگی ان کی خدمت کر کے . بیگم صاحبہ نے ڈینو کے تنبو پر اچٹتی نظر ڈالتے ہوئے مسکرا دی , بیگم صاحبہ : ٹھیک ہے دینو کل شام کی ٹرین میں ہم دونوں پنجاب جاینگے . آج تم آرام کرو . مجھ سے مخاطب ہو کر ؛ نوشی تم اگر چاہو تو دینو سے گپ شپ کے لئے رک جاؤ میں تھوڑا قیلولہ کرتی ہوں . میں : نہیں بیگم صاحبہ میں بھی آپکے ساتھ چلتی ہوں . دینو سے جو کچھ کہنا تھا وہ اچھی طرح سمجھ گیا ہے . . یہ کہتے ہوئے میں بھی بیگم صاحبہ کے ساتھ ہو لی . گھوڑوں کے اصطبل کے پاس سے گزرتے ہوے بیگم صاحبہ نے کہا کل شام تک شیرو آ جائیگا اور مجھے امید ہے جب میں پنجاب سے واپس آؤنگی تم اچھی گھڑ سوار بن چکی ہوگی ؛ میں : جی بیگم صاحبہ میری پوری کوشش ہوگی کہ گھوڑے کی سواری سیکھ جاؤں اور آپکے آنے تک خوب سواری کر چکی ہوں . بیگم صاحبہ : نوشی مشکی گھوڑا بہت اچھا گھوڑا ہے اس پر سواری تم ہمیشہ یاد رکھوگی جی بیگم صاحبہ میری بھی یہی خواہیش ہے . میں نے دل میں خوش ہوتے ہوئے کہا بیگم صاحبہ : نوشی دینو ہمارا مہمان ہے مگر وہ تمہارے میکے سے آیا ہے اس لئے اسکی مہمانداری پر تمہارا زیادہ حق بنتا ہے . اس لئے اسکا خاص خیال رکھنا میں : جی بیگم صاحبہ شکریہ . میں انکا مطلب سمجھتے ہوئے شرم سے جھینپ گئی . باتیں کرتے کرتے ہم گهر آ گئیں . اور بیگم صاحبہ آرام کرنے اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیں . میں برآمدے میں زلیخا کو دیکھ کر اسکی طرف پلٹی تو بیگم صاحبہ نے اپنے کمرے کے دروازے پر پہنچ کر مجھے آواز دی تو میں جلدی سے ان کے پاس گئی , بیگم صاحبہ : نوشی گپ شپ کے لئے رات کو شیرو کے کمرے میں جانے کی بجاۓ دینو کو اپنے کمرے میں ہی بلا لینا . اسس سے پہلے کہ وہ میرے شرم سے گکنار ہوتے رخسار وہ کمرے میں داخل ہو چکی تھیں . میں کچھ دیر یونہی شرمندہ سی کھڑی رہی پھر واپس زلیخا کی طرف ائی . میرا پروگرام تو یہی تھا کہ د بیگم صاحبہ کو گهر چھوڑ پھر دینو کے پاس آ جاؤنگی . مگر اب یہ جان کر کہ پوری رات دینو سے گپ شپ چلے گی میں نے زلیخا سے آرام کا کہ کر اپنے بیڈ پر آ کر دراز ہوگی . اور آنے والی رات ہونے والی کاروائی کے لئے خود کو تیار کرنے لئے میں جلد ہی سو گئی . شام گئے اٹھی اور غسل سے فارغ ہو کر می اصطبل کی طرف نکلی تو وہاں دینو کو کھرے دیکھا اس کے قریب جا کر میں نے اس سے کہا کہ رات گیارہ بجے کے بعد میرے کمرے میں آجانا اتنے میں زلیخا آ گئی اور ہم دونوں کھیتوں کی طرف چہل قدمی کے لئے نکل گئیں . کچھ دیر بعد آ کر فریش اپ ہونے کے بعد بیگم صاحبہ کے ساتھ ڈنر میں شرکت کی . کافی دیر تک بیگم صاحبہ کے ساتھ گپ شپ لگائی . آج انکے سفر اور پنجاب میں مصروفیات پر ہی بات چیت ہوئی . بیگم صاحبہ بہت خوش تھیں . میں انکو خوش دیکھ کر خوش ہو رہی تھی . دس بجے میں اپنے کمرے میں آ گئی اور ساڑھے گیارہ کے قریب دینو کو حویلی میں آتے دیکھ کر اس کے استقبال کے لئے میں دروازہ کھول کھڑی ہوگئی . اس کے دروازے میں قدم رکھتے ہی دروازہ بند کیا اور پلٹ کر اس کے گلے سے لپٹ گئی . اس رات ہم دونوں نہ سوئے نہ ایک دودرے کو سونے دیا وہ رات یادگار بن کر رہے گی ہماری یادوں میں ہمیشہ . اگلے دن دینو اور بیگم صاحبہ دوپہر کا کھانا کھا کر سکھر چلے گئے جہاں سے انہوں نے ایکسپریس ٹرین لے کر پنجاب جانا تھا پورے ١٦ گھنٹہ کا سفر ان دونو نے تنہا ہی طے کرنا تھا اور اس دوران کونسی کونسی منزلیں طے کرنی تھیں اس کا اندازہ تو سب ہی کر سکتے ہیں . مجھے خوشی تھی بیگم صاحبہ کی تمنا پوری ہو جایئگی اور دینو اسکی کی ایک ایک حسرت نکال دے گا . کیونکہ میں نے دینو کو بیگم صاحبہ کے متعلق جو ہدایات دی تھیں ان کے مطابق دینو کوئی کسر نہ چھوڑے گا . شیرو نے آج شام آنا تھا وہ نہیں ایا میں بھی پچھلی رات کی تھکی ہوئی تھی چارپائی پر لیٹتے ہی ایسی آنکھ لگی کہ دوسرے دن سورج نکلنے کے بعد ہی کھلی . دوپہر کے وقت اصطبل میں مشکی کے ساتھ تھی کہ زلیخا نے کہا لندن سے فون ہے . میں حیران ہو گئی کیونکہ ارمان حیات فون رات کو کرتے تھے میں جلدی جلدی گھر آئ اور فون پر ہیلو کہا تو آگے سے کسی نے پوچھا کیا میں مسز ارمان سے مخاطب ہوں جی میں مسز ارمان ہی بول رہی ہوں آپ کون ؟ میں ارمان صاھب کا دوست نوید خان بول رہا ہوں . جی جی وہ آپ کا ذکر کیا کرتے تھے . مسز ارمان مجھے افسوس ہے کہ میرے پاس آپ کو بتانے کے لئے کوئی اچھی خبر نہیں ہے مگر میں مجبور ہوں کہ یہ فریضہ مجھے ہی ادا کرنا ہے . وہ یہ کہ کر خاموش ہو گیا ؛ میرا دل ڈوبنے لگا تو میں ساتھ پر تپائی پر ہی بیٹھ گئی نوید صاحب کیا ہوا ارمان خریت سے تو ہیں نان ؛ جی سوری ارمان صاحب نہیں رہے ان کا چند گھنٹے پہلے اکسیڈنٹ ہوا جس میں وہ زندگی کی بازی ہار گئے . اب کوشش ہے کہ جلد سے جلد انکی باڈی پاکستان پہنچائی جے اور میں بھی ساتھ ہی آ رہا ہوں . مجھ سے بولا ہی نہ گیا کہ اس سے پوچھ سکوں یا کچھ کہہ سکوں زلیخا سے کہ بیگم صحبہ راولپنڈی پہنچ ہونگی انہیں خبر کر دو وہ میرے میکے میں ہی گئی ہونگی . پھر جیسے جیسے لوگوںکو معلوم ہوتا گیا وہ ڈیرہ پر اکٹھا ہوتے گئے اور خواتین ہمارے گھر رونے پیٹنے لگیں . مجھے ابھی تک اعتبار ہی نہیں آ رہا تھا . کہ ایسا بھی ہو سکتا ہے مگر وہ ہو چکا تھا میں اب ارمان کی بیوہ تھی میں نے زلیخا کے کہنے پر رسم کے مطابق کانچ کی چوڑیاں توڑ ڈالیں اور بال کھول کے مانگ میں راکھ بھر لی اور رونے والوں کے گلے لگے کے رونے لگی . یہ ایک بہت کٹھن گھڑی تھی . بیگم صاحبہ ہوتیں تو وہ اس اچھی طرح سے ڈیل کرتیں . ارمان اپنے قبیلہ کے سردار تھے . مجھے ایسے موقع کا کوئی تجربہ نہ تھا خدا خدا کر کے ٦ گھنٹہ میں بیگم صاحبہ بھی پہنچ گیں وہ پلائیں سے آئ تھیں . مگر انکا حال مجھے سے خراب تھا . اکلوتے جوان بیٹے کی موت کا سننا اور وہ بھی اچانک ایسے حالات میں والدین جان سے گزر جاتے ہیں . وہ مجھے کیا سنبھالتیں مجھے انکو سنبھالنا پڑ گیا شکر ہے میرے والدین اسکے ساتھ ہی آے تھے جس کی بدلوت مجھے سہارا مل گیا , بیگم صاحبہ حواس باختہ تھیں کبھی کچھ کہتیں کبھی کچھ کئی بار تو ایسا لگا کہ ان کو حادثے کا علم ہی نہیں , خاندانی ڈاکٹر ان کو ہر گھنٹہ دیکھ رہا تھا اور چیک کر رہا تھا . ڈاکٹر کو ڈر تھا انکے دماغ پر کوئی اثر نہ ہو گیا ہو کیونکہ انکی بہکی بہکی باتیں کسی کے پلے نہ پڑ رہی تھیں . دوسرے دن میت پہنچ گئی تو پورا علاقہ ہی اکٹھا ہو گیا . بیگم صاحبہ کو کچھ ہوش آیا تو ان سے جنازہ کے بعد دفنانے کی اجازت ملتے ہی ارمان کو سپرد خاک کر دیا گیا . پورا علاقہ اک سوگ کی لپیٹ میں آیا ہوا تھا . بیگم صاحبہ کی طبیعات سنبھل نہیں پا رہی تھی تو سیاسی پارٹی جس میں ارمان اور انکے والد اور بیگم صاحبه تھیں نے مجھ سے رابطہ کیا اور مجھ سے پارٹی میں شمولیت کے لئے کہا . کیونکہ سیاسی حمایت کے بغیر ارمان کی جایئداد اور علاقے کی قیادت مجھے نہیں مل سکتی تھی بیگم صاحبہ کی علالت کی وجہ سے خاندان میں پارٹی بازی کا خطرہ تھا . اس لئے سیاسی پارٹی کے چیئرمین کے کہنے پر میں پارٹی میں شمولیت کر کے علاقے کی قیادت سنبھال لی اور کچھ دنوں کے بعد بیگم صاحبہ کی طبیعت بھی سنبھال گئی تو انہوں نے بھی میری مدد کی جس کی بدولت ہر چیز میرے نام ہونا آسان ہو گیا . مگر بد قسمتی سے بیگم صاحبہ اپنے بیٹے سے زیادہ وقت دور نہ رہ سکیں اور ٢ ماہ بعد وہ بھی ہمیں داغ مفارقت دے گئیں . ٤ ماہ بعد میں نے شیرو سے نکاح پڑھا لیا اور زندگی پھر سے رواں دوں ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
  6. #میری_ساس_میری_سہیلی #قسط_18 میں اس کی چھاتی کے بالوں میں انگلیوں کو پھیرتی . مجھے لگا جیسے اس کا لن پھولنے لگا ہے تو میں نیچے آ گئی اور ٹانگیں کھول کے دینو کو اشارہ کیا وہ میری ٹانگوں میں آ کر دو زانو بیٹھتے ہوئے لن کو میری چوت پر رکھا تو میں نے اپنی ٹانگیں اٹھا کے کندھوں پر رکھ دیں . اب میری پھدی لن کے بلکل مقابل تھی . میں چاہتی تھی دینو ایک ہی دھکے سے اپنا لن پھدی میں اتار دے . اور اس نے واقعی ایسا دھکا لگایا کہ میرے چاروں طبق روشن ہو گیے میں عش عش کر اٹھی . اور دینو ہولے ہولے دھکے لگاتا مزے لینے دینے لگا . مجھے سلو موشن میں بھی بڑا سواد آنے .لگا تھا چوت میں لذت کی لہر اٹھی تو میرے سانس بھاری ہو گئے دینو میری حالت دیکھ کر زور زور سے دھکے مارنے لگا جس کا میں بھی جواب دینے لگی میرا جسم اینٹھنے لگا میرے ہاتھ دینو کی پیٹھ کھرچنے لگے اور میں نے جذبات سے مغلوب ہوتے ہوئے دینو کے شانہ میں اپنے دانت گاڑ دیئے اور لذت بھری سسکاریاں لیتے میں ڈینو سے چمٹ گئی ؛ دینو بھی آخری جھٹکا لگا کر اپنا گرما گرم لاوا میرے اندر ڈال کے ہانپتے ہوئے مجھ پر ہی گر گیا . میں بمشکل اپنی ٹانگیں اسکے شانوں سے اتار سکی اور اسے چومنے لگی .ا و دینو تم نہ صرف چاٹتے اچھا ہو تم چودتے بھی زبردست ہو . آج تم نے مجھے ایسا سواد دیا جو کبھی نہ بھول پاونگی .یہ لذت تو ٹرین میں بھی نہ لے سکی تھی . جب تم سے آتے ہویے پہلی بار چدوایا تھا , تمھاری جیبھ تو لذتوں کا خزانہ ہے . میں دینو کو چومتے ہویے جو منہ میں آرہا تھا کہتی جا رہی میں بیگم صاحبہ کو بھی سنا رہی تھی تاکہ اسے علم ہو کہ میرا اور دینو کا افئیر کوئی پرانا نہیں . بلکہ جب پچھلی بار وہ مجھے چھوڑنے آیا تھا تو راستہ میں ٹرین میں یہ سلسلہ شروع ہوا . اور شاید زندگی بھر چلتا رہے گا . سچ تو یہی ہے دینو کی زبان کسی بھی عورت کو اپنا دیوانہ بنا سکتی ہے جو ایک بار دینو سے چٹوا کے چدوا لے پھر وہ اس کو کبھی بھی بھول نہیں سکتی . اسکی جیبھ کا پھدی میں کھیل کھیلنے کا تصور ہی چوت گیلا دینے کے لئے کافی ہے . دینو کا لن ہاتھ میں لیا تو وہ سر اٹھا کر کھڑا ہو گیا . اس سے پہلے کہ میں پھر لن کو لیتی . میں نے مناسب سمجھا کہ باتھ روم میں جا کر فریش اپ ہو کر پھر سے شروع کروں اصل میں میں اپنی چوت کو اچھی طرح سے صاف کر کے دبارہ ڈی نو سے چٹوانے کے موڈ میں تھی . اور پھر باتھ روم میں جانے کے لئے مجھے اس کھڑکی کے سامنے سے بھی گزرنا تھا . جہاں بیگم صاحبہ کھڑے ہو کر مجھے چٹواتے اور چدواتے ہوئے دیکھ رہی تھی . میں شرطیہ کہہ سکتی ہوں کہ بیگم صاحبہ جیسی گرم عورت اب تک دو بار تو اپنی انگلیوں کے زریعہ فارغ ہو چکی ہوگی . یہ سوچتے ہویے مجھے وہ رات یاد آ گئی جس رات میں کھڑکی سے بیگم صاحبہ کا شیرو سے چدوآنے کا نظارہ کر کے لیک ہو تی رہی تھی اور میری چوت کا رس میری رانوں تک بہہ نکلا تھا . یہ خیال آتے ہی میرے چہرے پر ایک معنی خیز مسکراہٹ آئ اور میں مسکراتی ہوئے ننگے بدن ہی باتھ روم کی طرف بڑھی اور میں نے بیگم صاحبہ کے سایے کو کھڑکی سے ہٹتے ہوئے دیکھا . میں کولہو مٹکاتی کیٹ واک جیسی چال چلتے ہوئے باتھ روم میں داخل ہوئی . میری کمر پتلی اور کولہو باھر کو نکلے ہوئے ہیں جو بہت خوبصورت دکھائی دیتے ہیں میری مست چال دیکھ کر دینو کے تو ہوش اڑ گئے ہونگے . نہ جانے کیا سوچ کر میں نے دینو کو وہیں بلانے کا ارادہ کیا . "دینو , دینو " "جی بیبی جی " "ذرا یہاں اؤ جانی " میں اسے دیکھ رہی تھی دینو نے شلوار اٹھائی تو میں نے اسے کہا نہیں جانی یوں ہی آ جاؤ . دینو نے اپنے دون و ہاتھ اپنے کھڑے لن پر رکھے اورشرماتے شرماتے میری طرف آنے لگا دینو جانی ہاتھ ہٹا کر اس کو آزاد چھوڑ دو . مجھے اپنے لوڑے کے نظارے لینے دو پلیز اس نے ہاتھ اٹھاۓ تو چلتے ہوئے لن کبھی دائیں کبھی بائیں لہراتے ہوئے بہت پیارا لگنے لگا ظالم کی اٹھان اور شان چوت میں نئی جوت جگانے لگی . پھدی تو سمجھو گنگنانے لگی . جب وہ باتھ روم میں داخل ہوا تو میں نے اسے ہاتھ میں لے لیا اور اس کی بلائیں لینی لگی . میں اسے مسلتی اور پاگلوں کی طرح چومتی رہی . پھر اس پر پانی ڈالا اور خوب دھو کر صاف کیا اور دینو کی رانوں ٹانگوں کو بھی دھو ڈالا . اور دینو کو میں نے بولا کہ میری چوت صاف کرے . اس نے صابن سے میرے کولہوں سے لے کر پاؤں تک خوب صفائی کی اور پھدی کو اندر باھر سے خوب دھویا . پھر اس نے میری ٹانگوں گھٹنوں کے پیچھے سے ہاتھ ڈال کر دوسرا ہاتھ میری گردن کے پیچھے سے ڈال کر مجھے اٹھا لیا اور مجھے آ کر چارپائی پر لا چھوڑا وہ سامنے کھڑا تھا ؛ میں نے اسکے لہراتے لن کو اپنے منہ میں ڈالا اور چوپا لگانے لگی دینو جھکا اور میری چوت پر ہاتھ پھیرنے لگا میں نے جھٹ ٹانگیں کھول دیں . وہ میرا مطلب سمجھ گیا مجھے اس نے کندھوں سے پکڑ کر بیڈ پر لٹایا میں نے اسکا لن منہ میں لئے رکھا اور تکئے پر سر رکھا تو وہ میرے اوپر آ گیا اور میری چوت کو کھانے لگا . اب ہم ٦٩ پوزیشن میں ایک دوسرے سے مزہ لینے لگے . میں جانتی تھی کہ بیگم صاحبہ کی تو حالت پتلی ہو چکی ہوگی . نہ جانے وہ اپنے آپ کو کیسے روکے ہوئے تھی اور یقین تھا کہ کبھی ہمارے ساتھ شریک نہیں ہوگی . اسی لئے میں اسے خجل کرنے میں لطف اٹھا رہی تھی میں جانتی تھی چوت چٹوانا بیگم صاحبہ کی خوایش ہے . اور میرے لا شعور میں کہیں دبی ہوئی خوایش تھی کہ بیگم صاحبہ بھی دینو کے یہاں ہونے کا فائدہ اٹھا لے . وہ اب کیسے اپنی پھدی چٹوانے کا شوق پورا کرے گی یہ اس پر منحصر ہے . دینو کی زبان چوت سے ٹچ ہوتی گئی تو میں کانپ کر رہ گئی ؛ "پوری جیبھ اندر ڈال دینو " میں نے بیچینی سے کہا تو دینو نے میرے چوتڑوں کے نیچے ہاتھ ڈال کے انہیں اوپر اٹھا لیا اور اپنا منہ میری پھدی کے اوپر رکھ کر لکیر کے اس پاس چاٹنے گا , اس کے لن کو میں لولی پاپ کی طرح چوپا لگانے لگی . دینو نے لکیر کو اپنی زبان سے کھولنے کی کوشش کی . پھدی اپنے لب ڈھیلے چھوڑ دئیے دینو نے زبان اندر کی تو میں لذت سے تڑپنے لگی میں کمر لچکاتی تو دینو کی زبان پھسل پھسل جاتی اور مجھے سواد چوکھا آنے لگتا . دینو اس کام میں ماسٹر تھا میں تو اس کو چوت چاٹنے میں گرو کہونگی . وہ اپنی کھدری زبان سے پھدی کو کھنگالنے لگا اور میں مزے سے بے خود ہو کر سر پٹخنے لگی میرے منہ سے اسکا لن نکل گیا جسے میں ہاتھ میں لے کر مٹھانے لگی . جیسے جیسے دینو کی جیبھ چوت کے بھید کھولتی گئی تُوں تُوں میری حالت پتلی ہوتی گئی . آخر میں ہار گئی اور گرو کی جیبھ جیت گئی میں اپنا رس دینو کی زبان کو پلاتے پلاتے نڈھال ہو گئی اور دینو کے سر کے بالوں کو پکڑ کر چوت سے ہٹایا تو دینو بھی میرے ساتھ ہی لیٹ گیا , اور مجھے اپنی باہوں میں لے کر بھینچ لیا . میں نے اسکے ہونٹوں کو بوسہ دیا اور اسکے منہ میں زبان ڈالی تو اسکی زبان اور میری زبان تبادلہ خیال کرنے لگیں . دینو کی زبان اور منہ میں پھدی کا رس تھا میں نے اپنی چوت کا ذائقہ چکھا تو مست ہو کر دینو سے چمٹ گی اور اسکی زبان کو چوسنے لگی . دینو کا لوڑا میری رانوں اور چوت سے ٹکرا رہا تھا میں اسے ہاتھ میں لے لیا .دینو میرے مموں کو ہاتھ میں لے انکو دباتا اور نیپلز کو انگلی اور انگھوٹے سے مسلتا تو میرے منہ سے بے اختیار لذت بھری سسکی نکل جاتی , دینو میری رانوں اور کولہوں پر ہاتھ پھیرتا مجھے پھر تیار کرنے کی کوشش کر رہا تھا اور میں جانتی تھی ایک شہوت کی لہر پہلے ہی اٹھ چکی ہے جو مجھے لن پھدی میں لینے کے لئے مجبور کرنے کے لئے کافی ہوگی . دینو میرے نیپلز منہ میں لئے اپنی انگلی میری چوت میں اور اپنے انگھوٹے کو چوت کے دانے پر مسلنے لگا . میری کمزوری وہ جان چکا تھا اب کسی وقت بھی میری چوت لن سے چدوانے کے لئے بیقرار ہونے والی تھی اور میں کوشش کے باوجود اسے روکنے سے قاصر تھی . دینو نے چوت میں انگلی ڈالی اور مجھے تڑپانے لگا . میں اس کے ہونٹ چوسنے لگی اور اور اسکے نپلز کو مسلنے لگی . دینو . تم بہت اچھے ہو . تمہارے لئے میں بچھی جا رہی ہوں . پلیز اب مزید مت ترساؤ مجھے تسکین دو مجھے تم جم کر چود ڈالو میں مخمور آواز میں بولی . جی جان بتاؤ کیسے چدوانا پسند کرو گی میں اسی طرح چودوں گا . دینو بڑے پیار سے بولا تو میں نے چومتے ہوئے کہا ایسے سٹائل مین چود جس میں تمہارا لن میری پھدی کے اندر آخری حد تک جا کر چوٹ لگاۓ تاکہ میری چوت مزے سے عش عش کر اٹھے میں نے اسے بتایا . " وہ تو یہی سادہ طریقہ ہے کہ آپ اپنی پشت کے بل لیٹی ہوں میں آپکی ٹانگوں میں بیٹھا ہوں اور آپکی ٹانگیں میرے شانوں پر ہوں اور میں پھدی پر لن کو اوپر نیچے مسلوں پھسلاؤں اور جب چوت میں سیلاب انے لگے تو میں ایک دبنگ دھکا لگا کر چوت کو کچلتے ہوئے اندر لن کو آخر تک رگڑتا ہوا لے جاؤں . دینو بڑی تفصیل سے بتا رہا اور میں ملنے والی لذت سے شر شار مدہوش ہونے لگی . دینو کیا تم ایسا کر سکتے ہو . میں بے ترتیب سانس لیتے ہوتے بولی تو دینو نے بڑے اعتماد سے کہا " کیوں نہیں بیبی جی " پھر کرتے کیوں نہیں ہو ؛ کرو نان میں چدوانے کے لئے مری جا رہی ہوں , مجھے چود ڈال آج میری حسرتیں مٹا ڈال . دینو میری ٹانگوں کے بیچ آ گیا اس کے ہونٹوں پر ایک لُچی سی مسکراہٹ دیکھ کر پھدی کے لب کھلنے اور بند ہونے لگے . میں نے اپنی ٹانگیں دینو کے کندھوں پر رکھ دیں . دینو اپنے لن کو چوت پر مسلنے لگا . وہ اسے لکیر پر پھیرتا اور دانے کو چھیڑتا تو میری پھدی کے تمام مسلز میں ساز کی تاروں جیسا ارتعاش پیدا ہوتا اور میں عجیب سی لذت انگیز سنسناہٹ محسوس کرتی . میں اسکی چھاتی کے بالوں میں انگلیاں پھیرتی مزے کی وادی میں بھٹکنے لگی . دینو نے اچانک کہا سنبھل کے بیبی جی اور لن کو ایک ہی جھٹکے سے اندر کرتے ہوئے نہ جانے کس جگه جا چوٹ لگائی کے آنکھیں کھلی کی کھلی رہ گیں اور مزے کا ایک اور در کھلتے ہوئے میں محسوس کرنے لگی . اس کی اس چوٹ پر میں مچل مچل اٹھی . دینو نے دھکوں اور جھٹکوں کی بارش کر دی اور وہ لگا تار بنا رکے جم کر مجھے چودنے لگا جہاں تک ممکن ہوتا میں بھی دھکوں کا جواب دیتی . دینو میری آنکھوں میں دیکھتے دھکا مارتا اور رک کے مجھے آنکھ مارتا اور میں نظریں چرا لیتی وہ بدمعاشی پر اترا اور شرارتی موڈ میں مجھے بہت پیارا لگا . میں بھی اسے کبھی انگوٹھا اپ کر کے داد دیتی کبھی زبان باہر نکال کے اسے چڑاتی . کچھ ہی دیر بعد مجھ پر لذت اترنے لگی اور میرے سانس بے ترتیب ہونے لگے . دینو اور زور سے لگا دھکے . اپنے آخری جھٹکے کاری اور سوادی سے لگا کر مجھے لذتوں کے سمندروں میں ڈبو دے آواز کا خمار میں خود محسوس کرنے لگی اور اس کا اثر دینو پر بھی ہوا اور وہ برجوش ہو کر ظلمی دھکے مارتے ہوے خود بھی ہانپنے لگا . میری اور اسکی سانسوں اور لذت سے بھری سسکیوں نے کمرے کو عجیب طلسماتی سا بنا دیا . چوت اب مزید سواد کے شاور کو روک نہ پائی اور میں نے دینو کے ساتھ ہی منزل ہو کر اپنا رس بھی دینو کے گرم لاوے میں مکس کر دیا . میں نے ٹانگیں دینو کی کمر کے گرد کس لیں اور دینو کے لن کو چوت کے مسلز سے دبانے لگی اسکا لن آہستہ آہستہ ڈھیلا ہونے لگا اور میں چوت کے مسلز دبا دبا کر اس کا رس نچوڑنے لگی . آخر دینو کا لن پھدی سے نکل آیا اور دینو میرے پہلو میں دراز ہو گیا اسکے سانس ابھی تک تیز چل رہے تھے اور میں اسے باہوں میں لے کر دبانے لگی اور اسے چومنے لگی . میں بہت خوش اور مطمین تھی میرے انگ انگ میں سرور دوڑ رہا تھا . دینو میری جان تم جوانوں سے بھی زیادہ جوان ہو میں نے دینو کے کان میں سر گوشی کی تو مسکرا دیا . تم دو چار دن اور رہ کیوں نہیں جاتے دینو . آپکے ابو نے کہا تھا کہ زیادہ نہیں رہنا . ہو سکتا ہے اپک سسرال والے پسند نہ کریں . دینو ایک تو اب آپ کہنا چھوڑو میں ویسے بھی تم سے چھوٹی ہوں . مجھے اچھا نہیں تم مجھے آپ بولو . دوسرا میری سسرال میں صرف ساس ہی تو ہے بیگم صاحبہ وہ تو بہت اچھی ہیں وہ کبھی بھی مہمان کے چند دن رہنے کا برا نہیں منا سکتی . اگر تم چاہو تو بیگم صاحبہ سے کہلوا دوں کہ دینو جب تک شیرو نہیں اتا یہیں رہ لے . میں جانتی تھی کہ بیگم صاحبہ سن رہی ہوگی . دینو کہنے لگا جیسے آپ چاہو ؛ پھر وہی آپ . جی جیسے تم چاہو کرو . وہ تو خیر میں صبح بیگم صاحبہ سے بات کر لونگی امید ہے ان کو کوئی اعتراض نہ ہوگا فجر کا ٹائم ہونے والا تھا اور میں چاہتی تھی کہ اندھیرے اندھیرے ہی شیرو کے گھر سے نکل جاؤں تاکہ گھر جاتے ہوے کوئی دیکھ نہ پاۓ . میں نے دینو کی باہوں سے نکل کر پاجامہ پہنا اور شرٹ ڈھونڈنے لگی ادھر ادھر دیکھتے میری نظر کھڑکی کی طرف گئی تو وہاں بیگم صاحبہ کا سایہ غائب تھا , چارپائی کی دوسری شرٹ پر تھی اسے اٹھا کر پہنتے ہوے میں دینو کے پاس آئ اور اسے ہونٹوں پر بوسہ دے کر کمرے سے نکل ائی . میں جلدی جلدی جوگنگ کرتے ہوئے گھر آ گئی . اور سیدھا کمرے میں جا کر اپنے بیڈ پر اپنے آپ کو گرا دیا . میں تھکی ہوئی تھی مگر اس تھکن میں مٹھا س تھی بدن درد کر رہا تھا مگر آسودہ بھی تھا کافی عرصہ بعد دینو نے جم کر میری چدائی کی تھی اور میرے انگ انگ میں ایک میٹھا میٹھا سرور دور رہا تھا . پرسوں شام شیرو نے جو آگ لگائی تھی رات کو دینو نے اسے سرد کر دیا تھا . میں چاہتی تھی ایک ٢ بار دینو سے پھر چٹوا اور چدوا لوں اور بیگم صاحبہ بھی اگر دینو سے چٹوا لے تو کیا کہنے مگر بیگم صاحبہ کا صبح موڈ کیسا ہوگا کون جانے . کیونکہ ساری رات کھڑے ہو کر مجھے چدواتے اور چٹواتے دیکھتی رہی تھی . میں جلد ہی نیند کی وادی کی سیر کرنے لگی اس وقت آنکھ کھلی جب زلیخا نے میرا دروازہ ناک کیا . لنچ کا وقت ہو چکا تھا . میں جلدی سے باتھ روم میں جا کر غسل سے فارغ ہو کر باھر نکلی تو لنچ ٹیبل پر بیگم صاحبہ کو بھی موجود پایا . میں تھوڑی نروس سی ہو گئی . اور تھوڑا آہستہ آہستہ چلتے ہوئے لنچ ٹیبل کے نزدیک پہنچ کر بیگم صاحبہ کو ماتھے پر ہاتھ کر سلام کیا " آداب بیگم صاحبہ " میں انکی تیکھی مسکراتی کو نظر انداز کرتے ہوئے کہا . جیتی رہو بیٹی جیتی رہو . خوش رہو , او ادھر میرے پاس بیگم صاحبہ نے پاس والی کرسی کو ہاتھ لگاتے ہوئے کہا . اور میں ان کے پاس کرسی پر جا کر بیٹھ گئی . میں تھوڑا تھوڑا شرمندہ تو تھی مگر پچھتاوا محسوس نہیں کر رہی تھی اس لئے پر اعتماد تھی . اور ہر قسم کی صورت حال سے نمٹنے کو تیار تھی . " نوشی بیٹی رات کو دیر سے سوئی تھی کہ آج ناشتہ بھی نہیں کر سکی ہو . طبیعت تو ٹھیک ہے آپکی " جی بیگم صاحبہ رات کو دیر سے سوئی اس لئے صبح جلد بیدار نہ ہو سکی . میں بولی تو انہوں نے کہا . دینو آج ہی جانے کو تیار تھا مگر میں نے اسے آج کے لئے روک لیا ہے کیونکہ کل تو شیرو واپس آ جایئگا تو دینو کو دوسرے کوارٹر میں جانا پڑتا تو یہ مناسب نہیں لگتا کہ مہمان کو کبھی ادھر کبھی ادھر ٹہرایا جاۓ . کیا خیال ہے بیٹی . میں نے کہا جی جیسا اپ مناسب سمجھیں . وہی بہتر ہے اور دل میں سوچا ایک رات اور دینو کے ساتھ مل رہی ہے اور مسکرانے لگی . بیٹی آپ خوش تو ہو نا بیگم صاحبہ مے میری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے پوچھا تو میں نے نظریں چراتے ہوئے کہا جی بیگم صاحبہ میں بہت خوش ہوں . بس میں یہی تو چاہتی ہوں میری بیٹی ہمیشہ خوش رہے بیگم صاحبہ نے میری پیشانی اپر بوسہ ثبت کرتے ہوئے کہا تو میرے دماغ میں جو خدثات پل رہے تھے وہ دور ہو گئے اور میں مطمین ہو گئی . اور میرے دل میں بیگم صاحبہ کی عزت مزید بڑھ گئی . بیٹی دینو کتنے عرصہ سے آپ لوگوں کے ہاں ہے "جی یہی کوئی پانچ ٦ سال سے پہلے یہ ہماری زمینوں پر کام کرتا تھا پھر ابو اسے اپنے ساتھ لے آئے تب سے یہ وہیں ہے" . " اس کا مطلب ہے قابل بھروسہ آدمی ہے " بیگم صاحبہ نے کہا " جی جی آپ اس پر بھروسہ کر سکتی ہیں . یقین رکھیں آپ مایوس نہ ہونگی . میں نے زو معنی بات کی اور بیگم صاحبہ کی طرف دیکھا تو وہ زیر لب مسکرا رہی تھیں . مدیرے خیال می ان کے دماغ میں کوئی کھچڑی پک رہی تھی . ہو سکتا ہے شیرو کے وہاں نہ ہونے کا فائدہ اٹھانے کا سوچ رہی ہوں . اگر ایسا ہو بھی تو میں ان کو بلیم نہ دونگی . بیگم صاحبہ : بیٹی کافی عرصہ ہوا پنجاب نہیں گئی ؛ مصروفیات نے ایسا جکڑا کہ اب تو کبھی کبھار ہی خیال اتا ہے ویسے بھی میرے میکے میں اب صرف ایک بھائی ہی ہے جو گاہے بگاہے چکر لگا جاتا ہے . یہ کہتے هوئے انہوں نے ایک ٹھنڈی سانس لی اور رنجیدہ سی نظر آنے لگی . میں انکا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لے کر اس پر ہاتھ پھیرنے لگی . میری آنکھیں بھی نم ہو گیں تھیں . کہ ہم بیٹیوں کے نصیب میں جنم دینے والوں سے دوری ہی لکھی ہوتی ہے . بیٹی میں سوچ رہی ہوں میں پنجاب کا چر لگا ہی ہوں اور ہمیشہ پلین سے جاتی ہوں . جیسا کہ ا تم نے بتایا تھا کہ ٹرین میں سفر کا مزہ ہی اور ہے . ٹرین چل رہی ہو بھی تو آپ ہر طرح کے مناظر سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں . تو تمہارا کیا خیا ل ہے میں بھی کیوں نہ دینو کے ساتھ چلی جاؤں تمہارے والدین کے پاس ایک ٢ دن رہ کر سرگودھا اپنے بھائی کے ہاں ایک ہفتہ رہ کر آ جاؤن اور واپسی میں اگر ٹرین پر ہی ائی تو دینو مجھے چھوڑ جایئگا ان کے پروگرام سے میں کافی متاثر ہوئی . دل ہی دل میں انکی ذہانت کا اعتراف کرتے ہوئے میں نے ان سے کہا . یہ تو بہت ہی اچھا ہوگا . اس طرح کافی اچھا محسوس کریں گی یکسانیت سے ہٹ کر چینجنگ سے طبیعت ہشاش بشاش ہو جاتی ہے , آپ ضرور جائیں اور سفر انجوائے کرنے کے لیے ٹرین بہترین ذریعہ ہے . دینو ایک ا اچھا ہم سفر ثابت ہوگا اور آپ سارا سفر انجواے کریں گی . جب میں دینو کے ساتھ ائی تھی پنجاب سے تو اس سے پہلے میں دینو کا نام جانتی تھی اور اتنا معلوم تھا کہ ہمارے ہاں کام کرتا ہے . مگر بیگم صاحبہ ٹرین میں اسکی صلاحیتیں مجھ پر آشکار ہوئیں تب سے میں اسکی کارکردگی کی معترف ہوں . آپ گر چاہیں تو میں اسے بول دینگی کہ وہ آپ کا خاص خیال رکھے . ویسے وہ طبیعت کا مسکین ہے آپکو خوش کر دے گا اور آپکو کو شکایت کا موقع نہ دے گا . میری ذومعنی باتیں بیگم صاحبہ سمجھ رہی تھیں اور ان کا چہرہ شرم سے گلنار ہو رہا تھا . ہم دونو ایک دوسرے کو دیکھنے سے اجتناب برت رہی تھیں . ٹھیک ہے نوشی بیٹے اگر تم مطمین ہو تو ریلوے سٹیشن فون کر کے بکنگ کروا دو . اور پھر دینو کو بھی بتا دینا کہ آج نہیں وہ میرے ساتھ جاۓ گا . بیگم صاحبہ کے کہنے کے مطابق میں نے ٹرین میں بکنگ کروا دی اور زلیخا سے کہا کہ جا کر دینو کو بلا لاۓ تو بیگم صاحبہ نے کہا نہیں بیٹی دینو مہمان ہے تم خود جا کر اس سے بات کرو اور اسے سمجھا دینا ہو سکتا ہے تھوڑی دیر بعد میں بھی چکر لگاؤں . ٹھیک ہے بیگم صاحبہ میں خود ہی چکر لگا اتی ہوں اور شیرو کے مکان کی طرف چل پڑی . راستے میں میں نے دینو کو اصطبل میں گھوڑے کے پاس کھڑا پایا مگر میں وہاں رکے بنا سیدھا شیرو کے کمرے میں آگئی تھوڑی دیر بعد دینو بھی آگیا . اس نے دروازہ لاک کرنا چاہا تو میں نے اسے روکتے ہوئے کہا " نہیں دینو صرف کواڑ بھیڑ دو لاک نہ کرو " اور اس کے پاس پہنچی تو اس نے مجھے باہوں میں گھیر لیا اور میرے ہونٹوں پڑ اپنے ہونٹ رکھ دے جنہیں میں سوغات سمجھ کر چوسنے لگی . اس نے میرے چوتڑوں کو اپنے ہاتھوں میں لے کے اپنی طرف کھینچا تو اس کا لن شریف میری ناف کے کچھ نیچے ٹکرایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
  7. Tumhara storie bohat achi Hy him ko kaza ati aesi storie sy jaldi jaldi aur bhejo
  8. Hello is page ka Malik kon Hy koi hum ko batati hum pesy wala kahani b parhna chahti koi hamari madad kro mara
  9. Tumhari storie bohat achi Hy is ko jaldi jaldi bhejo hum ko maza ati ye parh k
×
×
  • Create New...