Jump to content
Private Cloud Activation Last Date 01-10-2020 After Last Date Not include Previous Purchase in your Private Cloud ×
URDU FUN CLUB
Private Cloud Activation Last Date 01-10-2020 After Last Date Not include Previous Purchase in your Private Cloud

DR KHAN

Co Administrators
  • Content Count

    4,144
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    1,098

DR KHAN last won the day on September 20

DR KHAN had the most liked content!

Community Reputation

15,237

About DR KHAN

  • Rank
    Best Writer

Profile Information

  • Gender
    Male

Recent Profile Visitors

29,438 profile views
  1. ووت بڑی ظالم شے ہے اور بندہ وقت کا غلام ہے۔ میں نے اس فورم کو اگر کچھ دیا ہے تو وہ وقت ہے۔ ان دنوں میرے پاس بس وقت کا ہی فقدان ہے۔ ایڈمن صاحب سے روز بات ہوتی ہے اور روز میں ان سے نیا وعدہ کر لیتا ہوں اور پھر وقت آنے پر ایک نیا وعدہ۔ بہر کیف نہ میں حوصلہ ہارا ہوں اور نہ جناب ایڈمن صاحب۔ اس کہانی کا کیا مستقبل ہو گا وہ تو ہم بعد میں طے کریں گے مگر چوری والا معاملہ آپ سب کے سامنے ہے۔ ہم اپڈیٹ اسی دن چور لے اڑتے ہیں اور ہم اپنے فورم کا قیمتی ڈیٹا سنبھالنے میں مصروف ہو جاتے ہیں۔ میں اگر خود پہ ستم ڈھا کر کہانیوں کو اپڈیٹ کر بھی دوں تو فورم یا مجھے کیا فائدہ۔ سب تو چور لے اڑے۔ اسی لیے بندہ سوچتا ہے کہ چلو یار کم ازکم خود کو تو عذاب میں نہ ڈالو۔
  2. میں کم و بیش دس سال سے لکھ رہا ہوں اور اب ایسا لگتا ہے کہ لکھنے کا مزید کوئی فائدہ نہیں ہے۔ میں ایک انتہائی مصروف انسان ہوں کیونکہ بےشمار پیشہ ورانہ مصروفیات ہیں مگر ایک سلسلہ اور لکھنے کا جو رشتہ بنا تھا، اس کو قائم رکھنا میں نے خود پہ ازخود فرض کر رکھا تھا۔ ہونے یہ لگا ہے کہ اتنی محنت اور اپنے آرام کے لیے مختص وقت سے گھڑیاں چرا کر جب میں کچھ لکھتا ہوں تو وہ ڈیٹا چوری کر کے دوسرے ممبران کو بیچا جاتا ہے۔ اب تو خود مجھے بھی بیچا جانے لگا کہ میں خرید لوں اگر پڑھنا چاہوں تو۔ ایسی چوری روکنے کا ایک ہی طریقہ ہے کہ لکھنا ہی بند کر دیا جائے۔ان لوگوں کو جب نیا کچھ ملے گا نہیں تو کہانی آگے کیسے بڑھے گی؟ یوں ایک نہ ایک دن ان کا چرایا ڈیٹا بےسود ہو جائے گا۔ میں اس فورم کے لیے لکھ رہا ہوں اور لکھتا رہوں گا بس شئیر نہیں ہوگا جب تک کہ ہمیں ایس ممبران نہیں مل جاتے تو اردوفن کلب کے سب سے قریبی رفقا ہیں اور وہ ایسے چوری ڈیٹا کی بجائے یہیں پہ کہانیاں پڑھنا پسند کرتے ہیں۔تمام نیا ڈیٹا انہی سے شئیر کیا جائے گا۔ شکریہ
  3. جی میں بالکل خیریت سے ہوں اور مسلسل کام کاج اور سفر میں تھا۔ ابھی ہوٹل پہنچا ہوں تو سوچا کہ نیٹ آن کیا جائے اور دیکھا جائے کیا چل رہا ہے۔ کہانیاں لکھ رہا ہوں اور ترتیب سے سبھی کو اپڈیٹ کروں گا۔ ہوس مکمل ہو جائے گی بس تھوڑا سا انتظار اور اس کے بعد کھپرو کی ملکہ اور پردیس پہ کام ہو گا۔ جبکہ اس کہانی کو میں فرصت میسر آنے پہ ساتھ ساتھ لکھتا رہوں گا۔ ایک مزے کی بات سن لیجیے کہ ایک صاحب نے مجھے واٹس ایپ گروپ میں ایڈ کیا اور مجھے میری ہی کہانی پڑھنے کی قیمت سو روپے فی قسط آفر کی۔ مطلب کمال ہی نہیں ہو گئی۔
  4. جناب کسی سے کوئی ناراضگی یا کوئی گلہ نہیں بس کام کی وجہ سے وقت کم مل پاتا ہے اور جو مل پاتا ہے وہ بھی ایسے ہی مختلف سلسلوں میں نکل جاتا ہے۔ ان دنوں کچھ اور سلسلے مکمل کرنے کی کوشش چل رہی ہے۔
  5. جناب اکھڑ منڈا صاحب فورم میں دوبارہ خوش آمدید۔ نازی کے متعلق ایسا سوچا تھا کہ جس وقت یاسر عظمیٰ نسرین کے ساتھ مگن تھا تو اس کا دھیان نازی کی طرف سے ہٹا ہوا تھا۔ ایسے میں نازی کا بہک جانا بھی عین فطری تھا کیونکہ وہ بھی عظمیٰ اور نسرین کی عمل کے ساتھ ساتھ ویسے ہی ماحول کا حصہ تھی۔ مگر اس کے ساتھ جو ہونا مقصود تھا وہ سیکس یا ریپ نہیں کچھ اور تھا جو کہ میں ابھی ظاہر نہیں کرنا چاہتا کہ کہانی کا سسپنس ختم ہو گا۔ مگر اس کو یہ سوچ کر چھوڑ دیا کہ کہانی کے اصل لکھاری نے کسی سے کہلوایا کہ ان کی ذاتی اور سچی زندگی پہ مبنی کہانی کو میں نے ذاتی عناد میں تبدیل کیا تو میں نے نازی کا وہ معاملہ ختم ہی کر دیا۔ دوسری بات کہ یہ بس کہانی ہے اور یاسر بس کردار ہے، ایک فرضی کردار، اسی طرح نازی بھی بس کردار ہے اور کچھ نہیں۔ہم کو کرداروں کو زیادہ دل پہ نہیں لینا چاہیے۔ میرے پاس شیخو جی کا کوئی رابطے کا ذریعہ موجود نہیں ہے اور نہ فورم سے باہر ان سے کبھی کوئی رابطہ رہا تو اس کے لیے معذرت۔
  6. باقی تو پتا نہیں کم از کم یہ تھریڈ غلط ہے جس میں آپ نے کمنٹ کیا۔اگر ہم سے کوئی پرابلم ڈسکس کرنا ہو تو دیگر سیکشن ہیں، وہاں کیجیے۔ آپ کا مسلئہ نوٹ کر لیا گیا ہے، اب سے احتیاط کریں گے کہ ترتیب خراب نہ ہو۔ ہم وہ کمنٹ اپروو نہیں کرتے جو سپیمنگ ہوں، جس سے بحث و مباحثہ تکرار ہونے کا اندیشہ ہو یا ایک دوسرے کے لیے غلط القابات استعمال کیے گئے ہیں یا بلاوجہ کی بدتہذیبی کا مظاہرہ کیا گیا ہو۔ باقی کسی نے اپنے مسائل کا ذکر کیا ہو تو ہم اس کو اپروو کرتے ہیں۔
  7. سب کے مسیجز اپروو ہونے کے بعد شو ہوتے ہیں ۔ ہم روزانہ کی بنیاد پہ درجنوں مشہوری والے اور سپیمنگ مسیجز ڈیلیٹ کرتے ہیں، اس کے ساتھ کچھ نازیبا باتیں اور ایک دوسرے پہ بھی ناگفتہ کمنٹس کیے ہوتے ہیں جن کو شو کرنا فورم میں فساد برپا کرنے کے مترادف ہوتا ہے۔ نازی کے متعلق سوچا تھا کہ اس کے توسط سے یاسر کو سبق ملے کہ جس طرح وہ کسی کی ماں بہن نہیں بخشتا کوئی اور بھی دودھ کا دھلا نہیں ہوتا۔ مگر پھر اس نیت سے اس کو ملتوی کر دیا کہ کوئی اس کو منفی انداز میں نہ لے جائے اور اس کو میری طرف کوئی انتقامی بات نہ سمجھ لے، حالانکہ یہ بات قریباً چھ سات ماہ پہلے ہوئی تھی کہ ایسا کچھ ہو گا۔ میں ضرور آپ کی زندگی پہ لکھنا چاہوں گا، میں آپ کو ایک مسیج کرتا ہوں اور آپ کچھ تفصیل دیجیے، اس پہ کہانی لکھی جا سکتی ہے یا ان کو یہیں اس کہانی میں بھی ضم کیا جا سکتا ہے۔
  8. میں آپ کی دعوت پہ شکرگزار ہوں اور خوش ہوں کہ کہانی آپ کو بھائی۔ میرے ذہن میں نازی بہت پہلے سے ہے اور اس کے ساتھ بھی کچھ اونچ نیچ متوقع ہے۔ میں نے دانستہ پہلے نہیں شامل کیا ،اس کی وجہ یہ تھی کہ کہیں یہ تاثر نہ جائے کہ میں یہ داستان کی غرض سے نہیں بلکہ ذاتی کردار کشی کی نیت سے کر رہا ہوں،اس لیے اس کو ٹال دیا۔
  9. ضرور حاضر ہے مگر اس ے لیے قطر ائیر ویز کی کوئی بھی انٹرنیشنل فلائیٹ لینا ہو گی کیونکہ یہ ان فلائیٹ مینو ہے۔
  10. اس وقت خادم اس جگہ بیٹھ کر لکھنے میں مشغول ہے۔ کوئی کچھ کھانا چاہے تو حکم کرے۔
  11. چلیں جی ہماری محنت مشقت کا کچھ تو وصول ہوا کہ جن کو کبھی کہانی پسند نہیں تھی اب دل کو لگنے لگی۔ آپ کی محبت کا شکریہ
  12. شادی کی پیشگی مبارکباد قبول کیجیے۔ بےچینی اسی وجہ سے ہوتی ہے کہ انسان جس چیز کو پوری زندگی ہیجان انگیزیکی نظر سے دیکھ رہا ہوتا ہے اس کو پاس آتا دیکھ کر اس کے جذبات مشتعل ہو جاتے ہیں۔ یہ عین فطری عمل ہے اور اس کے لیے ہیجان بھی عین فطری ہے۔ کہانی جتنی لکھی تھی میں نے وہ بھی میں جانتا ہوں کہ کتنی مشکل سے لکھی ہے۔میں نے جہاں تک سوچ رکھی ہے وہ تو بہت مہینوں بعد کی کہانی ہے۔ مگر لکھنا ایک دشوار عمل ہے اور اس کے لیے وقت کی دستیابی سب سے بڑا مسلئہ ہے۔
  13. میں بھی قریباً نصف کراچی سے ہوں اور اتفاق سے اس وقت بھی کراچی میں ہوں۔صبح لاہور واپسی ہے۔ سوشل ڈسٹنس کا فائدہ یہ ہے کہ پلین کی ساتھ والی سیٹ خالی ہے تو لکھنا آسان ہے۔ اس لیے کہانیوں کی اپڈیٹس مل سکی ہیں آپ لوگوں کو۔ آپ کو جو بھی گلہ یا شکوہ ہے کھل کر کیجیے،میں کوشش کروں کہ دور کروں چاہے وہ اپڈیٹ میں دیر ہی کیوں نہ ہو، کوشش ہوتی ہے کہ گلہ دور ہو اور مایوسی نہ ہو۔
  14. بڑی خوشی کی بات ہے کہ جناب نے آکاؤنٹ بنایا اور کمنٹ کیا۔ ایسا ہے کہ یاسر کا ہم کردار دیکھیں تو وہ ہمیشہ سے لڑکیوں کے سامنے گڑگڑاتا اور روتا آیا ہے۔رو رو کر اس نے لڑکیوں کی منتیں کیں اور ان کو منایا۔کبھی لڑائی جھگڑے سے واسطہ پڑا بھی تو یار سنگی ساتھ ہوں تو پہلوان، والی بات تھی۔ لڑکیوں سے بلیک میل ہونا اور ذلیل ہونا تو اس مزے کی قیمت ہے جو وہ اٹھا رہا ہے۔ایک کے بعد ایک حسینہ اس کے نیچے آتی ہے تو اسے کے کچھ مضمرات تو ہوں گے نا،کچھ پایا ہے تو کھونا بھی ہو گا۔ایسا تو ہوتا ہے ایسے کاموں میں۔ دوسری بات کہ وہ اکیلا ہی چالو اور چلترباز نہیں ہے،کئی بار اس کو سوا سیر لڑکیاں بھی مل جاتی ہیں جو اس کو ناکوں چنے چبوا دیتی ہیں۔ یاسر کا مشکل وقت ہے اور یہ بھی نکل جائے گا، جیسے آج صدف والے معاملے کا ایک حل مل گیا،ایک دیرینہ خواہش سونیا پوری ہوئی تو ایک نئی مصیبت سامنے آ گئی،یہی تو زندگی ہے۔
×
×
  • Create New...