Jump to content
URDU FUN CLUB

PrincipLe

Active Members
  • Content Count

    21
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    1

PrincipLe last won the day on December 30 2019

PrincipLe had the most liked content!

Community Reputation

28

Recent Profile Visitors

The recent visitors block is disabled and is not being shown to other users.

  1. جیسے یاری لگانی آسان اور نبھانی مشکل ہوتی ہے۔ کہانی شروع کرنی آسان مگر مکمل کرنی بہت مشکل ہوتی ہے
  2. بہت خوب کہانی ہے۔ اور انداز بیان بھی اچھا ہے
  3. ہمت کرنی پڑےگی، بات لباس کی تعریف سے شروع کرو پھر اسکے وجود کی تعریف پر آنا۔ اور اس کے ردعمل کے سامنا کرنے کے لیئے تیار رہنا۔ اور یہ ضروری نہیں کہ عورت اگر ایک سے دوستی کرتی ہے تو سب کے لئے لنگر کھلا ہے اور سب سے پہلے کیا آپ محلے میں بدنامی برداشت کر سکتے ہیں۔ اگر نہیں تو بھائی جانے دو
  4. ظفر بھائی، کیا کہتے ہیں کہ جواب جاہلاں باشد خاموشی۔ اور اواز سگاں کم نہ کند رزق گدارا۔ انسان جب اپنے سے نیچے والے سے لڑتا ہے تو خود بھی اسی کے مرتبے پر آ جاتا ہے۔ آپ منہ کیوں لگتے ہیں۔ آپ نے کم عرصے میں اپنی ساکھ بنای ہے اسےایک بدزبان اور بدتمیز اکی وجہ سے کیوں خراب کرتے ہیں۔ اپڈیٹ اپنی مرضی اور سہولت کے مطابق دیں آپ کونسا ہمارے ملازم ہیں۔ آپ مفت میں ہمیں تفریح فراہم کرتے ہیں جس کے لیے ظفر بھائی کا میں شکر گزار ہوں @admin ایسے لوگوں کی پوسٹ کو اپروول کیوں ملتی ہے؟
  5. محترم اپنے منتظرین کا خیال کریں۔ ایک شعر عرض ہے سونا لاون پی گئے سونا کر گئے دیس نہ آپ آ ے نہ سونا لائے چاندی ہو گئے کیس
  6. زیب داستان کے لئے اتنا تو چلتا ہے
  7. واہ واہ ۔لمبی غیر حاضری کے بعد یکے بعد دیگرے اپڈیٹس نے مزہ دوبالا کر دیا۔ کہانی نہایت دلچسپ ہو گئی ہے۔ اور پرانی کہانی سے علیحدہ پہچان بنا لی ہے
  8. سر دن میں دو چکر لگاتے ہیں کہ شاید اپڈیٹ آ گئی ہو ۔لوگوں کے کمنٹ تک پڑھتے ہیں۔ اپڈیٹ اپڈیٹ کی تکرار کرنا غیر مہذب لگتا ہے۔کیونکہ معلوم ہے کہ ناتواں جان نے بہت سا بوجھ اٹھایا ہوا ہے۔ اور جب بھی آپ کو فرصت فراغت ہو گی آپ اپڈیٹ کر دیں گے
  9. لکھنا کافی مشکل کام ہے۔ اس کے لیئے سب سے پہلے وقت چاہیے پھر ماحول چاہیے پھر موڈ چاہیے۔ پھر لکھنے کے آثار بنتے ہیں
  10. افسوس ناک صورتحال ہے۔سندھ اور بلوچستان حکومتوں کا تو نااہلی کا مقابلہ چل رہا ہے
  11. کہانی لکھنے اور پیش کرنے کا شکریہ۔ کچھ گذارشات وتجاویز تھیں ۔ اگر جنسی کہانی صیغہ واحد متکلم میں لکھی جانے تو ریڈر کو زیادہ بہتر لگتی ہے۔ پرانے دیہاتی ماحول میں زیادہ زور لنڈ چوت کی لڑائی پر رہاہے۔ چوپے چاٹے کا رواج بہت بعد میں آیا۔اور اب بھی کراہت سے کیا جاتا ہے ۔ جبکہ اس کہانی میں ہر فرد بے شک وہ13 14 سا ل کا بچہ ہو وہ بھی بآسانی و رغبت اپنی زندگی کے پہلے جنسی کھیل میں چاٹے لگا رہا ہے۔ اتفاقات بہت زیادہ ہیں۔ جہاں بھی کوئی کروانی ڈلنی ہوتی ہے ہیرو وہاں موجود ہوتا ہے۔ اوپر تحریر کردہ نکات میری کم علمی اور ناقص سمجھ کے باعث بھی ہو سکتے ہیں۔ اگر ایسےہی ہے تو درگزر کردیں
×
×
  • Create New...