Jump to content
URDU FUN CLUB
Ammar Ali

سونگنگ کے بارے میں آپکا کیا خیال ہے

سونگنگ کے بارے میں آپکا کیا خیال ہے  

31 members have voted

  1. 1. کیا سونگنگ ہونی چاہیے یا نہیں

    • ہاں اس میں کویی برایی نہیں ہے
      16
    • نہیں یہ ٹھیک نہیں ہے
      15


Recommended Posts

  میں نے ایسا ہی تھریڈ پہ بنایا تھا۔ لیکن کیونکہ اب میں یہاں آ گیا ہوں تو یہ تھیڈ دوبارہ یہال پر بنا رہاہوں یہاں پر لوگوں کی ذہنیت جانچنے کے لیے۔ تو میں آپ سے پوچھ رہا ہو کہ آپکا سونگنگن کے بارے مں کیا خیال ہے۔ کیا یہ صحیح ہ ےاور ہونا چاہیے یا نہیں  

Share this post


Link to post
Share on other sites

اردو فن کلب کے پریمیم ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔ سینکڑوں صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے پریمیم کلب میں شامل کر دی گئی ہے۔

میں سراسر اس کے خلاف ہوں۔کیونکہ اس سے معاشرتی ، روحانی ، مذہبی اور جسمانی بگاڑ پیدا ہوتا ہے۔یہ یقین کرنا مشکل ہے کہ پاکستان میں بھی یہ بہت عام ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites
23 hours ago, Ammar Ali said:

  میں نے ایسا ہی تھریڈ پہ بنایا تھا۔ لیکن کیونکہ اب میں یہاں آ گیا ہوں تو یہ تھیڈ دوبارہ یہال پر بنا رہاہوں یہاں پر لوگوں کی ذہنیت جانچنے کے لیے۔ تو میں آپ سے پوچھ رہا ہو کہ آپکا سونگنگن کے بارے مں کیا خیال ہے۔ کیا یہ صحیح ہ ےاور ہونا چاہیے یا نہیں  

i like it

Share this post


Link to post
Share on other sites

دیکھیں ہر انسان کی کچھ اپنی قیود اور حدود ہوتی ہیں۔ کچھ لوگوں کے لیے یہ جنسی آزادی ہے۔ کہ وہ اگر وہ سیکس انجوائے کرنا چاہتے ہیں تو ان کو آزادی ہونی چاہیے۔

ہمارے ہاں کتنے افراد ایسے ہیں جو مرد ہو کر یا شادی شدہ ہو کر دوسری عورتوں سے سیکس کرتے ہیں یا کرنا چاہتے ہیں؟ ظاہر ہے اگر سو فیصد نہ سہی تو نوے فیصد ضرور ہوں گے۔

مگر وہی افراد عورت وہ بھی صرف اپنی کے لیے سیکس کی آزادی کو گناہ کبیرہ سمجھتے ہیں۔ مگر وہی انسان کسی اور کی بیوی کے ساتھ کرنے جو بخوشی راضی ہے۔

یعنی شادی شدہ عورت کا سیکس کرنا بھی معیوب نہیں اور نہ اس سے سیکس کرنا برا ہے، بس وہ عورت میری بیوی نہ ہو۔

یہ وہ سوچ ہے جو ہمارے مردوں کی ہے۔

یہاں شادی شدہ مرد دھڑلے سے سیکس کرتا ہے اور شادی شدہ عورت چوری چھپے۔ کچھ لوگ اسی کو تسلیم کر لیتے ہیں اور یہ کام باقاعدہ رضامندی سے کرنے لگتے ہیں۔

اس میں برائی یہ ہے کہ یہ ہماری بظاہر ثقافت سے میل نہیں کھاتا کہ یہ کام کھلےعام ہو، مگر یہی کام ڈھکے چھپے ہو تو چلے گا۔یہ کام ہوتا ہے اور دہائیوں سے ہوتا آ رہا ہے۔ جو یہ کام کرتے ہیں وہ کرتے ہیں جو اس سے انکاری ہیں وہ پہلی قسم سے ہیں کہ خود کرتے ہیں بیوی کو اجازت نہیں، یا دوسری قسم سے ہیں کہ خود کرتے ہیں اور بیوی کے کرنے سے انجان ہیں اور پھر تیسری قسم کہ نہ خود کرتے ہیں اور نہ بیوی کو کرنے دیتے ہیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 9/10/2019 at 1:49 PM, Ammar Ali said:

  میں نے ایسا ہی تھریڈ پہ بنایا تھا۔ لیکن کیونکہ اب میں یہاں آ گیا ہوں تو یہ تھیڈ دوبارہ یہال پر بنا رہاہوں یہاں پر لوگوں کی ذہنیت جانچنے کے لیے۔ تو میں آپ سے پوچھ رہا ہو کہ آپکا سونگنگن کے بارے مں کیا خیال ہے۔ کیا یہ صحیح ہ ےاور ہونا چاہیے یا نہیں  

پہلی بات تو یہ ہے کہ اس کا جواب سب سے پہلے آپ کو خود دینا چاہیے تھا۔

یہ بدتہذیبی ہے کہ اس معاملے پر خود کوئی رائے نہ دیں جس پر دوسروں کی  رائے لیں رہے ہوں۔

 

اب آ جاتے ہیں سوال کی جانب۔

تو جناب میرے خیال میں سیکس ایک بہت ہی پرسنل پسند ناپسند  کا معاملہ ہے۔

کسی کو کچھ تو کسی کو کچھ پسند ہوتا ہے

یہ تو جوڑے پر منحصر ہے کہ اسے پسند ہے کہ نہیں۔

ذاتی طور پر میں مجھے سخت ناپسند ہے۔

اور میری تحقیق کے مطابق اس کو اپنانے والے جوڑے خوش نہیں رہتے۔بلکہ وہ جوڑے ہی نہیں رہتے۔

ہمارے معاشرے میں یہ رجحان ابھی کافی کم ہے مگر وجود رکھتا ہے۔

 

زیادہ تر ہو یہ رہا ہے کہ  مرد بیوی کے علاؤہ بھی کہیں نہ کہیں مزے کر رہا ہوتا ہے۔عورت کو پتہ  چلتا ہے تو  وہ بھی انتقام  کے طور پر اسی راہ پر چل پڑتی ہے۔

اور اتنی دلیر ہو جاتی ہے کہ  شوہر کی پرواہ نہ کرتے ہوئے اپنی یاریاں نبھاتی ہے

اور مرد اپنے بچوں اور فیملی کی بقاء  کی خاطر چشم پوشی کرتا ہے۔پتی دونوں کو ہوتا ہے کہ دوسرا اس ٹایم شاپنگ کے بہانے یا ٹور کے بہانے کیا کرنے جا رہا ہے مگر ایک دوسرے کو برداشت کرتے ہوئے معاملہ نبھایا جاتاہے۔ حتی کہ باہر س کھانا ملنا بند ہو جاتاہے اور گھر کی دال پر گزارا کرنا پرتا ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

i like sister and brother swap

sex may har thrna ki azadi honi chahy koi bhee kisi say or khain bhee sex kar sakta hy

bass maa or baap k allawa

Share this post


Link to post
Share on other sites

میں خود ایک سونگر لیڈی ہوں۔ مجھے اس کام پہ میرے شوہر نے مجھے لگایا تھا اور اب مجھے اس میں ان سے زیادہ مزہ آتا ہے۔میں اپنے شوہر کی تیسری بیوی ہوں اور انھوں نے اپنی پچھلی دونوں بیویوں کے ساتھ سونگنگ کی ہوی ہے۔ ہم دونوں تقریباً پچھلے تین سال سے سونگنگ کر رہے ہیں۔ اس دوران میں تقریباً ۹۱ مردوں سے سیکس کر چکی ہوں۔ تو جو کچھ بھی میں کہوں گی وہ تجربے کے بنا ہ پر کہوں گی۔ سونگنگ ایک ایسا ٹاپک ہے کہ جس ہمارے معاشرے میں کوی بات نہیں کرنا چاہتا کیونکہ یہ انکی سوچ سے باہر ہے کہ ہمارے اسلامی اور قدامت پسند معاشرے میں ایساممکن ہے۔ لیکن وہ یہ بات بھول جاتے ہیں کہ ہم لوگ انسان پہلے او رمسلمان بعد میں ہیں۔ اور ہر انسان کی طرح ہماری بھی جنسی ضروریات ہیں جسکی مکمل تسکین میں ہمارا معاشرہ او رمذہب رکاوٹ ہیں جس سے ہماری قوم جنسی گھٹن کا شکار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان دنیا میں پورن سرچزمیں نمبر ون ہے۔اور اس کی جھلک  آپ اس تھریڈ کے رسپونسز سے دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح وہ کہ رہے ہیں کہ یہ سب ہمارے معاشرے کے اقدار کے خلاف ہے۔ تو میرا ان سے یہ سوال ہے کہ کیا جو کچھ  وہ یہاں کرنے آتے ہیں وہ ہماری معاشرتی اقدار کے خلاف نہیں۔شادی شدہ عورتوں کے معاشقے کی داستانیں، خونی رشتوں کے درمیان  جنسی تعلقات، غیر ازدواجی جنسی تعلقات ، یہ سب کیاہمارا دین اورمعاشرہ اس سب کی اجازت دیتا ہے تو پھر آپکو سونگنگ پہ اتنا اعتراض کیوں۔ یہ تو سب ہی جانتے ہیں مرد کی کبھی بھی ایک ہی عورت سے تسکین نہیں ہوتی۔ لیکن کچھ لوگ یہ بھول جاتے ہیں کہ عورت بھی اس معاملے میں مرد سے پیچھے نہیں ہوتی جس طرح مرد ایک ہی عورت کو چودتے چودتے بور ہو جاتا ہے اسی طرح عورت بھی ایک ہی مرد سے چدوا چدوا کر بور ہو جاتی ہے بس شوہر کی محبت اورمعاشرے کے دباو کی وجہ سے وہ اس کا کھل کر اظہار نہیں کر پاتی۔ اسی لیے دونوں  مرد اور عورت غیر ازدواجی تعلق قام کرتے ہیں  اپنی روٹین سیکس سے ہٹنے کے لیے۔بہتر یہ نہیں ہے کہ دونوں میاں بیوی ایک دورے کو دھوکہ دینے کی بجاے اپنی اس بنیادی جنسی ضرورت کو تسلیم کریں اور باہمی رضامندی سے ایک دورے کو اجازت دیں غیر ازدواجی تعلق رکھنے کی۔ میرے خیال میں اس میں کوی مزاقہ نہیں ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

ساری ۹1 مرد نہیں بلکہ ۱9 مردوں سے سیکس کیا ہوا ہے میں نے اب تک

Share this post


Link to post
Share on other sites

main na 46 women and girls say sex kia ha , 3 bar 2 ladies ko aik he bed pay akhata choda ha. 

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 6/19/2020 at 10:28 AM, SwngerLady said:

ساری ۹1 مرد نہیں بلکہ ۱9 مردوں سے سیکس کیا ہوا ہے میں نے اب تک

kash ka app ki list ka 20 number main ho jayon

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

×
×
  • Create New...